ڈیلی نیوز
جشن آزادی مبارک - یوم آزادی کے اس عظیم اور سعید موقعہ پر تمام پاکستانی بھائیوں کو مبارک باد پیش کرتے ہیں اور دُعا گو ہیں کہ اللہ تبارک تعالیٰ ہم سب کوآزادی کی اس نعمت کی قدر کی توفیق عطا فرمائے اور ایک دوسرے کی تکیف کا احساس عطا فرمائے۔۔ آمین۔ثم آمین۔۔۔ منجانب ۔ کمال فرید ملک خادم شہر فریدؒ

http://urdu.kotmithan.com/pdf/dewan.pdf اگر آپ دیوان فریدؒ اردو میں پڑھنا یا ڈاون لوڈ کرنا چاہتے ہیں تو اس لنک پر کلیک

کافی نمبر 1

مصرعے 30   الفاظ26.
اج سا نو لڑے مکلا یا
اج سانولڑے مکلایا                       سربار ڈکھاں دا چا یا

آج محبوب ملیح  ہم  سے رخصت ہو نے  لگا  ۔سر  پر  دکھو ں کا  بو جھ  آ پڑا 
اے قبلہ اقدس عالی  ہر عیب کنو ں ہے خا لی
اتھ  عبد عبید سوالی  جیں جو منگیا سو پا یا
یہ قبلہ ،مقدس ہے ،عالی مرتبت ہے ،ہر عیب سے  پا ک  ہے
یہا ں  پر  ہر بندہ  سوالی  ہے اور جس نے جو  ما نگا  پا  لیا
وہ امن اللہ معظم ْ وہ حرم اللہ محرم
ْ وہ بیت اللہ مکرم ہے رحمت دا سرما یا

واہ کیسا پر عظمت مقام امن ہے ۔ وا ہ ،خا نہء خدا کتنا محترم ہے ۔سبحا ن اللہ
خدا کا گھر کتنا لا ئق اعزازواکرام ہے،بیشک یہ سرمایہ رحمت ہے۔
اے نو ر سیا ہ مجسم ہے عین سواد الاعظم
تھیا بیشک آمن بے غم جو حرم ا حا طے آیا

یہ نور سیا ہ پیکر انواروتجلیات ہے ،عا لم اسلا م کا عظیم اکثریتی مرکز ہے،
یہا ں جو بھی آیا ،بیشک امن اور بے فکری کی نعمتوں سے سرفرا ز ہو ا ۔
کر یا د حریم حرم کوں رکھ پیش پرا نے غم کوں
دل آکھے کھا نواں سم کو ں ہے جیو ن کو ڑ اجا یا

حرم کعبہ کو اور اپنے سوزدیر ینہ کو یا د کر کے ،دل کہتاہے ، زہر کھ الے
کیو نکہ اس کے بغیر ،زندگی ، بے مصرف ہے۔
ہؑ ن وا گا ں وطن ولا یا ں لکھ مو نجھ منجھا ریا ںآیا ں
دل سچڑیا ں  پتیا ں  لا یا ں  ول میلیں  با ر خدایا

اب سوا ریو ں کا رخ وطن کی طرف ہو گیا ، ہزار غم اندو ہ ہما رے حصے
میں آگئے دل میں عشق صا دق نے گھر کر لیا ،اے میرے خدا ، ایک دفعہ
پھرہمیں اسکا دیدار کرا دینا
دل دلبر کیتے سکے  گھر شہر  با زا ر  نہ ٹکے
ونج کھو سو ں طو ف دے دھکے ْ ول جیکر بخت بھڑایا

دل ،دلبر کے لئے ترستا ہے گھر ، شہر ، با زا ر کسی جگہ قرار نہیں پا تا اگر بخت
نے یا وری کی تو ایک دفعہ پھر طو اف کے مرا حل ضرور طے کریں گے۔
بن یا ر فرید نجرساں  رت رو رو آہیں کرساں
غم کھا کھا اوڑک مرسا ں  ڈکھ ڈکھڑیں جیڑا تا یا

فرید ، میں دوست کے بغیرگھلتا رہوں گا ،خو ن کے آنسو بہا ؤ ں گا اور غم کھا
کھا کر آخر کا ر مر جا ؤ ں گا ، دردرو غم کی آگ نے مجھے جلا یا دیا ہے۔

کافی نمبر 2
مصرعے 32 الفا ظ                    را گ مالکونس
انہد مرلی


گؑر نے پو رے بید بتا ئے عقل فکر سب فہم گما ئے
مد ہو شی وچ  ہو ش سکھا ئے سارا سفر عروج سجھا یا

پیر ومر شد نے تما م اسرار ورمو ز با طنی بتلا دیئے ،جن کی وجہ سے عقل و فکر کا فہم وادراک جا تا رہا ،جذب و کیف میں علوم رو حا نی سکھلا دیئے ،اور مدرا ج اعلیٰ طے کرا دیئے
وحدت عین عیان ڈٹھوسے طمس حقیقی سمجھ لیو سے
مخفی کل اظہا ر تھیو سے ہر گن گیان دے گیت نو ں پا یا

نو ر و حدا نیت ،،انہیں آنکھوں سے دیکھ لیا ، فنا ئیت کا ادراک حا صل کر لیا ۔ تما م پو شیدہ امو ر کا مشاہدہ کر لیا اور علم وجدان کو پا لیا ۔
تھئے  واضح  مشہور وقا ئق  تھئے  لا ئح  انوار حقا ئق
ظاہر گجھ سب کجھ دے لا ئق قرب تے بعد دا فرق اٹھا یا

تما م پیچیدہ اور مشکل مسائل واضح ہو گئے ،حقا ئق کے انوارہ تجلیات روشن ہو گئے عیاں ، اور نہاں سب کچھ سمجھ میں آ گیا ،نزدیکی اوردوری کا فرق مٹ گیا ۔
ہنسی خو ب بتا یا ں با تاں گجھڑے راز انو کھیاں گھا تا ں
گم تھیاں کو ڑیاں ذات صفا تاں لمن الملک دا دورہ آیا

الہا می سا ز نے کیا ہی خو ب تفصیل بتا دی اور کیسے حل طلب راز اور انو کھے انداز سمجھا  دیئے ، اپناآپ بیچ میں سے ہٹ گیا اور فرما ن الہیٰ کا دور آگیا
خمر طہو روں  پی  پیما نے تھیو سے عا شق مست  یگا نے
بھل گئے صوم صلوۃ دو گا نے رندی مشرب سانگ رسا یا

مشروب معرفت کے جا م پی کر ،ہم عاشق بے مثال مست ومخمو ر ہو گئے ، احکا م شرعی کی سدھ نہ رہی اور رندی سوانگ رچا لیا
جا نے کو ن گنوار مقلد ْ وہ ْ وہ  ریت مقدس جید
تھی مطلق بے قید موحد مسجد سورت وچ آپ سما یا

کو ئی جا ہل پیرو کا ر ہما رے مسلک کو کس طرح سمجھ سکتا ہے ۔ اسے اس مقدس اور حقیقی راہ کی کیا خبر،اسے تو تعینا ت سے آزاد ہو کر ایک عا رف
کی آنکھ سے دیکھا جا سکتا ہے کہ وہ تو کا ئنا ت کے ذرہ ذرہ میں سما یا ہو اہے

جب ہک رمز ملی تو حیدوں دل آزاد ڈٹھم تقلیدوں
تھی کر فرد، فرید ! فریدوں سری رو حی وعظ سنا یا

جب تو حید کا بھیدسمجھ میں آگیا تو میرا دل کو راز تقلید سے آزاد ہو گیا اور فرید ،نے فریدیت اور انسا نیت میں منفرد ہو کر ، اسرارو رمو ز رو حا نی کی تلقین شروع کر دی۔

کا فی نمبر3
مصرعے 38                 الفا ظ 77                 راگ تلنگ

بن دلبر شکل جہان آیا
بن دلبر شکل جہا ن آیا                                                     ہر صورت عین عیا ن آیا
محبو ب حقیقی مظا ہر کا ئنا ت کی صورت میں جلو ہ فرما ہو گیا  ۔ اور ہر صورت میں واضح طو ر پر نما یا ں ہو گیا ۔
کتھے آدم ؑ تے کتھے شیث ؑ نبی                                       کتھے نو ح کتھا ں طو فا ن آیا
کتھے ابرا ہیم ؑ خلیل نبی                                              کتھے یو سف ؑ وچ کنعا ن آیا

کہیں پر آدم ؑ اور کہیں پر حضرت شیث ؑ اور کہیں پرحضرت نوح ؑ اور طو فان نو ح کہیں پر ابرا ہیم خلیل اللہ اور کہیں حضرت یو سف ؑ کی شکل میں جلو ہ نما ہو ا۔
کتھے عیسیٰؑ تے الیاس ؑ نبی                                                  کتھے لچھمن رام تے کان آیا
کتھے ذکریا ؑ کتھے یحییٰ ؑ ہے                                                  کتھے موسیٰؑ بن عمران آیا

کہیں پرحضرت ذکریاؑ اور کہیں پر یحییٰؑ ،کہیں پر حضرت مو سیٰ ؑ بن عمران کہیں پر عیسیٰ اور حضرت الیاس ؑ کی صورت اور کہیں لچھمن را م اور کرشن میں ظا ہر ہوا
بو بکر ؓ عمر ؓ عثما نؓ کتھاں                                                         کتھے اسدؓ اللہ ذیشان آیا
کتھے حسنؓ حسینؓ بنے                                                             کتھے مرشد فخر جہان آیا

کہیں خلفا ئے راشدین کی سیرت میں اور کہیں حسنین کر یمین کی شہادت میں اور کہیں پرمیرے مرشد حضرت فخر جہان کی صورت میں اپنی صفات کا اظہا ر کیا ۔
کتھے احمد شاہ رسولاں دا                                                             محبوب سبھی مقبولا ں دا
دستار نفوس عقولاں دا                                                               سلطاناں سر سلطان آیا

کہیں پر حضرت احمد مجتبیٰ ﷺمیں جلوہ نماہوا ۔ جو سلطان الانبیا ء،معلم ملا ئکہ اور شہنشاہ عا لم ہیں ۔
تنزیل کتھا ں جبریل کتھاں                                                             توریت زبورانجیل کتھاں
آیا ت کتھاں ترتیل کتھاں                                                               حق با طل دا فرقان کتھاں

کہیں پر نزول وحی کی صورت ،کہیں پر جبریل ، توریت زبور انجیل کی صورت ،کہیں پر آیا ت وتلا وت کی صورت اور کہیں پر حق وبا طل کا فرق کرنے وا لا قرآن آیا ۔
کل شئے وچ کل شئے ظاہر ہے                                                         سوہنٹاظاہر عین مظاہر ہے
کتھے ناز نیاز داماہر ہے                                                                    کتھے درد کتھاں درمان آیا

تما م اشیائے کا ئنات میں اس کاظہور ہے،یہ صاحب حسن وجمال اپنے مظاہر میں واضح طور پر موجود ہے ناز نیاز کے انداز میں اور کہیں درد اور کہیں درما ن کی صورت میں جلو ہ گر ہے۔
کتھے ریت پریت دا ویس کرے                                                              کتھے عا شق تھی پر دیس پھرے
کھلے گل وچ مارو کیس دھرے                                                             لٹ دھا ری تھی مستا ن آیا

کہیں مہر محبت کا رنگ اختیار کا رنگ اختیار کر لیتا ہے اور کہیں عا شق بن پردیس پھرتا ہے ،کبھی زلف بدش قا تل اور کبھی زلف دراز ملنگ کی صورت اختیا ر کر لیتا ہے۔
کتھے پنڈت جو سی ہے                                                                        کتھے سا می تے کتھے بھو گی ہے
کتھے مصر برا گی روگی ہے                                                                کتھے بید بیا س گیا ن آیا

کہٰیں پنڈت ہے ،جو تشی ہے،جو گی ہے اور کہیں سو امی اور سخت ریا ض فقیر ہے کہیں پر ہیز گا ر ہےکہیں گنہگار ہے اور کہیں ویا س ہے ۔
      خا مو ش فرید اسرار کنوں                                                                   چپ بے ہو !دی گفتا ر کنو ں

پر غا فل نہ تھی یا ر کنو ں                                                                   ایہو لا ریبی فر ما ن آیا
فرید خا مو ش ہو جا ، یہ راز کی با تیں اتنے عمو می ا ندا ز سے ظا ہر نہ کر بس اپنے دوست سے غا فل نہ ہو ،یہی حکم الہیٰ ہے۔

کا فی نمبر 4
مصرعے 27          الفا ظ33                
 را گ جو گ 
تا ں وی کیا تھی پیا
تھئی تا بع خلقت سب               تا ں وی کیا تھی پیا
     ہئی گم تھیون مطلب

تما م مخلو ق تمہا رے تا بع فرا ما ن ہو گئی ،تو بھی کیا ہو ا،اصل مقصد تو آپکو مٹا کر فنا ئیت حا صل کر نا ہے۔ 

 تیدا رشد ارشاد تو نیں                              ونج پہنتا عجم عرب
تا ں وی کیا تھی پیا

 بیشک تمہا را ارشد ہدا یت عرب وعجم تک پہنچ گیا پھر بھی کیا ہو ا۔
پڑھ پڑھ بید پران صحا ئف                          پیا سکھیو ں علم ادب
تا ں وی کیا تھی پیا

وید ،پرا ن،صحا ئف پڑھ پڑھ کر،علم و ادب سیکھتے رہے تو بھی کیا ہو ا۔
سارے جگ تے حکم چلا نو یں                          پا شا ہی دا منصب
تا ں وی کیا تھی پیا

تما م کا ئنا ت پر حکمرا نی ہو گئی ، شا ہی منصب حا صل ہو گیا تو بھی کیا ہو ا۔
زہد عبا دت عا دت تیڈی                                     بیا کیتو کشف کسب
تا ں وی کیا تھی پیا

زہد و عبا دت تمہا ری فطرت ثا نیہ بن چکی ،اور کشف و کرا ما ت کا اعزاز حا صل ہو گیا تو بھی کیا ہو ا۔
دنیا دے وچ عزت پا تو                                         گیو ں عقبیٰ نا ل طرب
تا ں وی کیا تھی پیا

دنیا میں عز ت پا لی آخرت میں بھی بخوشی جا رہے ہو تو بھی کیا ہو ا۔
سنی پا ک تے حنفی مذہب                                             رکھیو صوفی دا مشرب
تا ں وی کیا تھی پیا

اہلسنت کا صا ف ستھرا حنفی مسلک اختیا ر کر لیا ۔صو فیو ں کا مشرب قبو ل کر لیا ،تو بھی بھی کی اہو ا۔
وچ آثا ر، افعا ل، صفا تیں                                          جے یا ر گھدوئی لبھ
تا ں وی کیا تھی پیا

علا متو ں میں ،افعا ل میں اور اوصا ف میں اگر تم نے اپنے محبو ب کو پا لیا تو بھی کیا ہو ا۔
غو ثی قطبی، رتبہ پا یو                                                تھیوں شیخ شیوخ لقب
تا ں وی کیا تھی پیا

غیو ثیت وقطبیت کا اعزاز حا صل کر کے شیخ المشا ئخ کا لقب حا صل کرلیا ، تو بھی کیا ہو ا۔
شعر فرید تیڈا ونج ہلیا                                                  ہند ما ڑ ڈکھن پو رب
تا ں وی کیا تھی پیا

فرید ،بے شک تمہا رے شعر ،ہند ،مارواڑ،دکن اور پو رب تک مشہو ر ہو گئے ،تو بھی کیا ہو ا

(اصل مقصد تو اپنے آپ کو مٹا نا ہے۔) 

کا فی نمبر 5
مصرعے 28            108الفا ظ                   
را گ تلنگ 
تیڈے نیناں تیر چلا یا
تیڈے نینا ں تیر چلا یا                         تیڈی رمزا ں شو ر مچا یا

تیرے تیر نظر نے اور رمزو کنایہ نے دھو م مچا دی ۔
المست ہزار مرا یا                            لکھ  عاشق ما ر  گنوا یا
ہزار ہا مست حالو ں کو ہلا ک کرا دیا اور لا کھو ں عا شقوں کو فنا کرا دیا
ابرا ہیم اڑا ہ اڑایو                                با ر برہو ں سر چا یا
حضرت ابرا ہیم کو جلتے شعلو ں میں ڈا لااور انھوں نے عشق کا بو جھ خو شی سے اٹھا لیا
صا بر دے تن کیٹرے                                بچھے مو سیٰ طو ر جلایا
حضرت ایو ب کے بدن میں کیڑے ڈا ل دئیے اور حضرت مو سیٰ کو جلو ہ کے لئے کو ہ طو ر جلا دیا ۔
زکریاؑ کلو تر چرا یو                                          یحییٰ گھو ٹ کو ہا یا
حضرت زکریاؑ کو آرے سے چرا دیا اور حضرت یحییٰ جیسے دلھا کو ذبح کرا دیا ۔
یو نس ؑ پیٹ مچھی دے پا یو                                       نو حؑ طو فا ن لڑھا یا
حضرت یو نس کو مچھلی کے پیٹ میں ڈال دیا ۔اور حضرت نو ح ؑ کو طو فا ن میں بہا دیا ۔
شاہ حسن کو ں شہر مدینے                                                زہر دا جا م پلا یا
شہنشا ہ حسن کو مدینہ شہر میں زہر کا جا م پلا دیا ۔
کربلا میں تیغ چلا یا کر                                                 ایڑھا کیس کرا یا
کر بلا میں تلو ار چلا کر اتنا بڑا غیر معمعولی قہر و غضب اور ظم و ستم بر پا کر دیا ۔
شمس الحق دی کھل کھلا یو                                            سرمد سر کپو ایا
حضرت شمس الحق کی کھا ل اترا وا ئی اور سرمد کا سر کٹو ادیا ۔
شا ہ منصو رچڑھا یو سو لی                                                      مستی سا نگ رسا یا
حضرت منصور کو سولی پر لٹکا کر عشق و مستی کا انو کھا کھیل رچا یا ۔
مجنو ں کا رن لیلیٰ ہو کر                                                     سو سو نا ز ڈکھا یا
مجنو ں کی خا طر لیلیٰ بن کر سو سو نا ز دکھا ئے ۔
خسرو تے فرا ہا د دے کا رں                                              شیریں نا م دھرا یا
خسرو اور فرہا د کی خا طر شیریں کا رو پ دھا ر لیا ۔
دردر دا با ر اٹھا یا ہر ہک                                                 اپنا وقت نبھا یا
درد عشق کا بو جھ اٹھا کر ہی سب نے اپنا وقت بسر کیا ۔
کر قر با ن فرید سر اپنا                                                        تیڈرا وارہ آیا
فرید تو بھی اپنا سر قربان کر کیو نکہ تیری با ری بھی آگئی ہے ۔

کا فی نمبر 6
 مصرعے  16                       166الفا ظ                          را گ جو گ
چو ڑا انا ڈے جیسلمیردا
چو ڑا  انا  ڈے جیسلمیر دا                        سو ہا  رنگا  ڈے خا ص اجمیر دا

میرے محبو ب مجھے جیسلمیر کی چو ڑیا ں اور خا ص اجمیر کا رنگ کیا ہو ادوپٹہ منگو ادو ۔
ہو وے اصلی کا ص مڑیچہ                                           نہ نقلی ول پھیر دا
مارواڑ کے علا قے کا اصلی دوپٹہ چا ہیئے ،نقلی نہیں ۔
جلدی آوے نہ چر لا وے                                                     کم نہیں اتھ دیر دا
جلدی منگو ادے ،دیر نہیں لگنی چا ہیئے ، کیو نکہ تا خیر ہمیں پسند نہیں ۔
برہو ں دا چوڑا پریت دا سو ہا                                                             کا ک ندی دے گھیر دا
عشق کی خو شبو سے معطر چو ڑیا ں ،اور کا ک ندی کا محبت ووفا سے مملو دو پٹہ چا ہیئے۔
بچھوا بیکا نیری گھنساں                                                           سجڑے کھڑے پیر دا
دائیں اور با ئیں پا ؤ ں کے لئے میں بیکا نیر کی بنی ہو ئی پا زیبیں بھی لو ں گی ۔
سہجوں پیساں پا ٹھمکیساں                                                    تھو را چیساں ڈیر دا
یہ سب میں خو ش ہو کر پہنو ں گی اور اپنی سج دھج دکھلا ؤ ں گی ، چاہئے اس کے لئے مجھے دیو ر کا احسا ن کیو ں نہ اٹھا نا پڑے
یا ر فرید منیندم آکھیے                                                              کیا غم یئے دے ویر دا
فرید! میرا محبو ب میرا کہا ما نتا ہے، مجھے غیروں کی دشمنی کا کیا غم۔

کا فی نمبر 7
مصرعے 66                    101الفاظ                      را گ جو گ


حسن قبح سب مظہر ذاتی
حسن قبح سب مطہر ذاتی                                                                ہر رنگ میں بے رنگ پیا را
نیک وبد سب اسی کی زات کا اظہا ر ہیں ہر رنگ میں وہی بے رنگ پیا را مو جو د ہے ۔
’’ نَحنُ اَقْرَبِِْ،، راز انو کھا                                                                             ’’وَھُوَ مَعَکُمْ‘‘ ملیا ہو کا
سمجھ سنجا نو ، عالم لو کا ہے                                                                          ہر رو پ میں عین نظا رہ

’’نحن اقرب ‘‘ (۱) جیسے انو کھے را ز کا ’’وھوامعکم‘‘(۲)جیسے عا رفا نہ نکتے کا اعلا ن بھی ہو چکا ہے ۔ اس لئے سمجھ لو اور جا ن لو اے دنیا وا لو کہ ہر رو پ میں اسی کا نظ ارہ ہے ۔
’’وَ فِیْ اَنفُسِکُمْ‘‘ سر الہیٰ                                                                              ’’لو دُلٓیتم ‘‘فا ش گوا ہی
ہر صورت وچ را نجھن ما ہی                                                                        کیتا نا ز دا ڈھنگ نیا را

’’وفی انفسکم ‘‘ (۱)را ز الہیٰ ہے جسکی ’’لو دلیتم ‘‘(2)نے علی الا اعلا ن گو اہی دے دی ہے کہ ۔ہر ایک صورت میں اسی محبو ب کا اظہا رہے ، یہ اور با ت ہے کہ انو کھے انداز سے اپنی صفا ت کا اظہا ر کیا ہے ۔
حسن ازل دی چا ل عجب ہے                                                                             طرح لطیفے طرز غریبے
آپ ہے عا شق آپ رقیبے !                                                                               تھی دلبر جگ مو ہیس سا را

حسن ازل کی چا ل عجیب ،انداز لطیف اور طرز بہت ہی انو کھی ہے۔یہ خو د ہی عا شق ہے ۔ خو د ہی رقیب ہے اور خو دہی محبو ب بن کر تما م کا ئنا ت کو اپنا گرویدہ بنا تا ہے۔
کتھ مطرب تان ترا نہ                                                                                      کتھ عا بد کتھ نفل دوگا نہ

کتھ صو فی سر مست یگا نہ                                                                                     کتھ رندان میں کرے اوتارا
کہیں وہ مغنی ہے، کہیں وہ نغمہ ہے کہیں وہ عا بد ،کہیں وہ عبا دت ہے،کہیں وہ مست و بے نظیر صوفی ہے اور کہیں وہ رندوں میں جلو ی فر ما ہے۔
کیا افلا ک ، عقول ، عنا صر                                                                               کیا متکلم ، غا ئب ، حا ضر
سب جا ، نو ر حقیقی ظا ہر                                                                                   کو ن فرید غریب و چا را

تما م آسما ن ،تما م ملا ئکہ ،یہ کا ئنا ت ، تما م مخلو ق نا طق ،غا ئب اور حا ضر ، ہر جگہ اس کا حقیقی نو ر جلو ہ گر ہے ، فرید بیچا رہ کو ن ہے جو اس کی وسعت اور صفا ت کو بیا ن کر سکے 

کا فی نمبر 8
مصرعے 24                           97الفا ظ                             ’’را گ تلنگ ‘‘
’’درداندردی پیڑ‘‘
درد اندر دی پیڑ                                         ڈا ڈھا سخت ستا یا
ہجر فرا ق دے تیر                                          دل نو ں ، ما ر مو نجھا یا

درددل کی شدت نے بہت ستا یا ہے اور ہجر و فرا ق کے تیر نے دل کو بربا د کر دیا ہے۔
عشق ہے ڈکھڑے دل دی شا دی                               عشق ہے رہبر مر شد ہا دی
عشق ہے سا ڈا پیر                                         جین کل راز سجھا یا

دکھی دل کے لئے عشق ہی وا حد ذریعہ مسرت ہے ۔عشق ہی ہما را رو ھا نی پیشوا ہے
اور اس نے ہی ہمیں تما م اسرا رو رمو ز معرفت سے رو شنا س کرا یا ہے۔
اے دل مٹھڑی ،گندڑی جا نو ں                                 لا دی ، برہو ں دی بنڈری
ازلوں تا نگھ دا تیر                                           جا نی ، جو ڑ چو نبھا یا

یہ بد نصیب خرا ب ح ال ہے اور نا تواں دل تو پیدا ئشی تیرے ہی عشق کا اسیر ہے اور
ازل سے ہی محبو ب نے اس میں اشتیا ق و انتظا ر کا تیر ، پیو ست کر دیا ہے ۔
نا زتبسم گجھڑے ہا سے                                              چا لے پیچ ، فریب دلا سے
حسن دے چا ر امیر                                            جنہا ں چو گو ٹھ نو ایا

شو خی ، تبسم ، حجا ب االو دو مزا ح اور پر فریب چا لیں ،یہی
سلطنت حسن کے چا را میر ہیں جنہو ں نے چہا ر دا نگ عا لم جھکا یا ہو اہے
وٹھڑی پا لی سدا متو الی                                          مینہ وسراند تے والی آلی
رو ہی رشک ملہیر                                        واہندا بخت ولا یا

سدا متوالے میدا ن با رش ست تروتا زہ ہ وگئے ،با رش اور گیلی ریت سے روحی رشک ملہیر
ہو گئی اور پا نی کیطرح بہتا ہو ا(جا تاہوا )بخت واپس آگیا ۔
تھیا ں سر سبز فرید دیا ں جھو کا ں                                سہجو ں خنکی چا ئی سو کا ں
نند نہ ما نون کھیر                                         مو لیٰ ما ڑ وسا یا

’’فرید ‘ ‘ کے ٹھکا نے سرسبز ہو گئے ،خشک گھا س تر وتا زہ ہو گئی ،مو یشیو ں کے
تھنو ں میں دودھ نہیں سما رہا ،اللہ تعا لیٰ نے ماڑوار کا علا قہ آبا د کر دیا ۔

کا فی نمبر 9
مصرعے 12                                      78الفا ظ                                        را نگ بھیروی

’’سا ڈا دوست دلیں دا‘‘
ساڈا دوست دلیندا  نو رمحمد خو اجہ                                        ڈھو لا یا ر چہیندا نو ر محمد خو اجہ
حضرت خو اجہ نو ر محمد قبلہ عا لم مہا روی ہما رے دوست
ہما رے محبو ب ،مددگار اور مر غو ب قلوب ہیں ۔
سا ری سا ڈی شرم بھرم دا                                        تیڈے گل وچ لا جا
ہما ری ساری عزت ووقار کی لا ج ااپ کے ہا تھ میں ہے۔؂
عرب وی تیڈی عجم وی تیڈی                                        ملک پنجا ب دا را جہ
عرب بھی آپ کے زیر نگیں ،عجم بھی آپ کے زیر اثر ،
ملک پنجا ب پر بھی آپ کی رو حا نی حکمرا نی ہے ۔
زمین زمن وچ وجد گجدا                                          فیض تیڈے دا  وا جا
کا ئنا ت میں آپ کے رو حا نی فیو ض کا ڈنکا بج رہا ہے۔
قدم تیڈے وچ نو ں من بھا گے                                  انگن میرے پو ں پا جا
آپ کے قدم مبا رک میں ہزاروں نعمیتیں ہیں ،میرے آنگن میں بھی قدم رنجہ فرما ئیں ۔
دلبر جا نی یو سف ثا نی                                               مو ہن مکھ ڈکھلا جا
اے میرے محبو ب ،اے یو سف ثا نی ،مجھے بھی اپنا دیدار کرا دے۔
نو شہ شہر مہار دا  بنرا                                                    سکدی کو ں گل لا جا
اے سلطنت رو حا نیت کے نو شہ اور شہر مہا را ں کے دولھا ،
مجھ مشتا ق دیدارکو بھی گلے لگا لے۔
نین فرید دے درس پیا سے                                           آجا  نا ں  ترسا  جا
’’فرید ‘‘ کی آنکھیں دیدار کے لئے ترس رہی ہیں ،اب تو آ جا ئے اور زیا دہ نہ ترسا یئے

کا فی نمبر 10
مصرعے                                         111الفا ظ                                 ’’را گ جو گ ‘‘
’’سا ڈے نا ل سدا تو ں وس پیا ‘‘
سا ڈے نا ل سدا تو ں وس پیا                                            وس ، ہس ، رس ، دل کھس پیا
تم ہمیشہ ہما رے سا تھ بستے رہو۔ ہنستے ، بستے ، خو شیا ں منا تے اور ہما را دل چھینتے رہو ۔
سر وچ دردر ، دما غ خماری                                                تنلے رتڑے ، ہنجڑو ں جا ی
جیڑے جھو را دل آزا دی                                         تن سو لا ں وے وس پیا

سر میں درد ، دما غ ماؤ ف، گو شہ ء ہا ئے چشم خو ن آلو د ،اشک رواں ،
رو ح مٰں اضطرا ب ،دل میں آزا ر اور جسم و تن مبتلا ئے اذیت ہیں ۔
بے پت دی پتڑی یا ری                                              ظلم اندھا ری بے نرواری
پہلو ں لٹ لٹو ادل                                                   سا ری پچھے چو ری نس پیا

نا قا بل اعتبا ر کی دو ستی بھی نا پا ئیدا ر ہے ، ظلم و ستم اور بے انصا فی ہے ،پہلے تو دل لو ت لیتے ہیں اور چو ری چپھے بھا گ کھڑے ہو تے ہیں ۔
ہجر سو اکو ئی سو د نہ پا یم                                                 چو ٹیا ں کھتم حا ل و نچا یم
منتا ں کیتم سیس نو یم                                                نک گھر ڑیندیں گھس پیا

عشق میں مجھے تو سو ائے ہجر کے اور کچھ نہیں ملا ، میری زلفیں پر یشا ن ہو گئیں ، حا لت تبا ہ ہو گئی ،
میں نے اس کی منتیں بھی بہت کیں ، سر جھکا یا ، سجدے کر کے نا ک گھسا دیا ،(مگروہ آما دہ ء التفات نہ ہو ا)
پیش کیتا جیں فہم فکر کو ں                                            لیت لعل دی ارکھر کو ں
کر کر شکر نہ ڈ تڑس سرکو ں                                            عشق دی رہ وچ بھس پیا

جس نے عشق کیا ،لیکن فہم و فکر کو سا منے رکھا ، دلا ئل و تو جیحا ت میں پڑگیا اورشکر گزا ر ہو تے ہو ئے ،
اپنا سر تسلیم خم نہ کیا وہ منا زل عشق طے کرنے میں نا کا م رہ گیا ۔
لا نے پھو گ فرید سو ہسیا ں                                         سٹ گھر با ر تے با ر وسیساں
کرڑی تے ونج جھو کا ں لیسا                                                   ا ج کلھ ٹو بھا وس پیا

فرید ! میں ’’لا نے ‘‘اور’’ پھو گ ‘‘سے دل بہلا ؤ ں گا ۔ اپنا گھر چھو ڑکے
ویرا نے آبا د کو ں گا ۔ جنگلو ں میں ٹھکا نہ بنا ؤ ں گا ۔
ان دنو ں ’’رو ہی‘‘ کے تا لا ببھی با رش کے پا نی سے بھرے ہو ئے ہیں ۔

کافی نمبر11
مصرعے 22                        108الفاظ                       ’’راگ مالکونس‘‘
’’سانول پنل‘‘
سانول پنل ول گھر ڈو سدھایا                                                     تن مونجھ ماریا سرسول تایا
میرا محبوب اپنے وطن کی طرف روانہ ھو گیا۔اداسی اور
ا ضطراب نے مجھے بے حال کر دیا۔
ڈونگر ڈراون ڈکھڑے ستاون                                                     ڈینیں، بلائیں کر ٹول آون
بن ڈھول سکڑے سوڑے نہ بھاون                                                    گھر بار ڈسدا سارا پرایا

دشوار گزار کوھستانی راستے خوف زدہ کرتے ھیں ،دکھ ستاتے
ھیں،آدم خور بلا ئیں گروہ بنا کے وآتی ہیں۔محبوب کے بغیر،
ٰٰ عزیز اور رشتے دار اچھے نہیں لگتے۔گھر جانے کو دل نہیں کرتا،
پرایا سا لگتا ہے۔
مٹھڑی موئی نوں خوشیاں نہ پھلیاں                                                  ڈوڑے ڈوڑاپے تانگھاں اوڑایاں
جانی اویڑا، پیتاں کللڑیاں                                                    ہے ہے اڑیا اکھیاں اجایا

اس بد نصیب کو خوشیاں راس نہیں آئیں۔ دوہری اذیتیں،
انوکھا انتظار، محبوب سخت مزاج، سوز عشق نا قابل فہم، ہاے
ہاے ان آنکھوں نے کہاں جا پھنسایا۔
تحفے ڈکھاندے، غم دیاں سوغاتاں                                                کیچوں سسی ڈو آیاں براتاں
برہوں بساطاں اوکھڑیاں گھاتاں                                                   جہیڑا نہیڑے نیڑا نبھایا

دکھوں کے تحفے، غموں کی سوغاتیں؛کیچ سے بیچاری سسی کے
لیے کیا کیا نزرانے آئے ہیں۔بساط عشق کے داؤ پیچ بھی سخت دشوار
ہیں،دل ہر وقت کچوکے دیتا رہتا ہے۔ لیکن پھر بھی نبھائے جا رہی ہے۔
گزرے وہانے جوبن دے مانے                                                     سہرے کمانے ، اجڑے ٹکانے
جھر دی جھرانے ڈھولن نہ جانے                                                          دلڑی مسایا، بے وس رولایا

جوانی کے جس شباب پر ناز تھا وہ تو گزر گیا، سہرے کے پھول
مرجھا گئے،ٹھکانے اجڑ گئے، لیجن محبوب توجہ نہیں کرتا،غم واندوہ
سے گھلتی جا رہی ھوں۔مجھے تو اپنے اس دل نے
برباد کر دیا، بے بس کر کے رلا دیا۔
آساں امیداں ، ساڑیاں پجالیاں                                                 اصلوں بروچل پیتاں نہ پالیاں
مارو، مہر دیاں دیداں نہ بھالیاں                                                             آیم فریدا سختی  دا سایا

امیدیں آرزوئیں جل کر خاک ہو گئیں ، میرے محبوب نے
میرے ساتھ وفا نہ کی۔ چشم کرم وا نہ کی ، فرید مصیبتوں
نے اپنا سایہ ہمارے سر پر ڈال دیا۔

کافی نمبر۱۲
مصرے 44                                                73الفاظ                                               ’’راگ مالکونس‘‘
’’سانول سجن‘‘

سٹ سانول سجن سدھایا                                             سر سینجڑے سول ستایا
محبوب ملیح، مجھے چھوڑ کر چلا گیا۔سر پر سوزوغم کا بوجھ آ پڑا۔
پٹڑی کلہڑی تپڑی ملڑی                                         سانگ ہجر دی رلڑی
جندڑی جلڑی دلڑی گلڑی                                         لگڑی اگ کللڑی
پیڑ اولڑی نیڑے گھلڑی                                           پل پل پور پرایا

اس سوختہ جاں، بوریا نشین کے سینے میں ہجروفراق کا تیر
پیوست ہو گیا ۔ دل و جان جل بھن کر رہ گئے۔ یہ آتش
عشق بھی عجیب ہے۔ محبت کی عطا اس انوکھی اذیت میں
فکر و غم ہر لمحہ مسلط رہتے ہیں۔

پر بت رولے جکھڑ جھولے                                                          غم دے سانگ سنگولے
سوز سمولے یار نہ کولے                                                                   جیڑا جل بل کولے
سختی گولے سجھم نہ اولے                                                          دم دم روگ سوایا

کوہ پیمائی ، تند و تیز ہوا ، غموں کے نشتر، سوز و غم کا ہجوم ،
فراق یار کی ازیت ،دل جل بھن کر کوئلہ ، سختی اور مصیبت
میری تلاش میں ہے،کچھ سجھائی نہیں دے رہا، لمحہ لمحہ
ازیت روز افزوں ہے۔

کافی نمبر 14
مصر عے  14                         63 الفاظ                              راگ تلنگ ،
کوئی ماہنوں آمیں یار دا
کوی ماہنوں آمیں یار دا                                       ساتھی کھڑا سنہیڑا ڈیندا
شاید، مجبوب کا کاصد آیا ہے ، جو میرے ساتھی کو کوئی پیغام دے رہا ہے۔
نعشق نہیں ہے تیرا بلا دا                                          ظلمیں چوٹ چلیندا
یے عشق نہیں تیرا بلا ہے، جو بہت کاری ضرب دیتا ہے
ناز اد ا کجھ کرے نا ٹالا                                        حکمیں بر ہوں بچھیندا
اس کا نازو ادا کچھ مہلت نہیں دیتا بلکہ حکما اسیر محبت بناتا ہے۔
رمز رموز تے گچھرے ہاسے                                    سب کجھ درد سوجھیندا
یہ درد عشق ہی ہے جو رمز رموز اور اشاروں کنایوں سے روشناس کراتا ہے۔
سوز فراق تے درد اندیشے                                      تن من پھوک جلیندا
سوز فراق دردوازیت اور فکرو اندیشے، جسم و جان کو جلا کر خاک کر دیتے ہیں۔

ہر گز سول نہ سہندی دلڑی                                  یار  اے بار سہندا
سوز عشق کو یہ ناتواں دل کہاں برداشت کر سکتا ہے تھا ، یہ تو  میرے محبوب کا فیضان ہے کہ خوشی سے برداشت کر رہا ہے
ہجر فرید کیتی دل زخمی                                       دوست نہ مرہم لیندا
،،فرید ،، ہجرو فراق نے دل زخمی کر دیا ہے لیکن دوست اس پر مرہم نہیں لگا رہا۔

کافی نمبر 15
مصر عے30                               39 الفاظ                           ’’ راگ تلنگ ‘‘
’’کیا ہال سنا واں دل دا ‘‘
کیا ہال سنا واں د ل   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  دا کوئی محرم راز نہ ملدا
کسے اپنے دل دا حال سناؤں، کوئی محرم راز ہی نہی ملتا۔
منہ دھوڑ مٹی سر پایم   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  سارا ننگ نموز ونجایم
کوئی پچھن نہ ویڑھے آیم   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔           ہتھوں اٌلٹا عالم

منہ پر دھول ، سر پر خاک ، ننگ وناموس بر باد ، لیکن کسی نے حا ل پوچھنے کی تکلیف گوارا نہیں کی ، الٹا تمام لوگ میری ہنسی اُڑارہے ہیں۔
آیا بار برہوں سر باری  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   لگی ہو ہو شہر خواری
روندیں عمر گزاریم ساری   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔    نہ پایم ڈس منزل دا

عشق کا بوجھ بہت بھاری ،گلی گلی رسوائی،ساری عمر روتے روتے گزری، لیکن منزل کا پتہ مجھے ابھی تک نہیں ملا۔
دل یار کیتے کر لا وے   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  تڑپھاوے تے غم کھاوے
ڈکھ پاوے سول نبھاوے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایہو طور تیڈے بیدل دا

دوست کے دیدار کے لیے دل روتا ہے،فریاد کرتا ہے،تڑپاتا
ہے ،غم کھاتا ہے ،دکھ اٹھاتا ہے،اور مصیبتیں برداشت کرتا ہے
کئی سہنس طبیب کماون   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  سے پڑیاں جھول پاون
میڈے دل دا بھید نہ پاون   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   پووے فرق نہیں ہک تل دا

بے شمار طبیبوں نے علاج کیا ،دوای کی سینکڑوں پڑیاں گھول کرپلائیں،اور حالت میں تل برابر فرق نہ آیا۔
پنوں خان نہ کھڑ مکلایا   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   چھڈ کلہاڑی کیچ سدھایا
سوہنے جا ن پچھان رلایا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   کوڑا عذر نبھایم گھل دا

پنوں خان مجھ سے ملے بغیر چلا گیامجھے اکیلی چھوڑ کے کیچ سدھار گیا اور میں غنودگی کا بہانہ بنا کر چپ رہی ۔
دل پریم نگر ڈوں تانگھے   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  جتھاں پیندے سخت اڑانگے
نا  راہ فرید نہ لانگھے   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   ہے پند ھ بہوں مشکل دا

فرید!،’’پریم نگر‘‘کی طرف کھنچا جا رہا ہے ،لیکن وہاں کی مسافت بہت دشوار گزار ہے ،نہ وہاں کے لئے کوئی راہ ہےنہ گھاٹ ہے ،واقعی سفر بہت کٹھن ہے۔

کا فی نمبر16
مصر عے12                            57الفا ظ                         ’’راگ جو گ‘‘
’’مارومٹھل‘‘
مارو مٹھل ول مکھڑا چھپا یا                          ڈکھٹر یں ڈکھایا دردیں منجھا یا
میرے شیر یں ادا قا تل نے پھر سے اپنا چہرہ چھپا لیا  دکھوں نے غمزدہ اور درد عشق نے برباد کر دیا
تا نگھیں تپا یا مو نجھیں مسا یا                                 سو لیں ستا یا نیڑ ے ہرایا
انتظار کی حد ت ، غموں کی شدت اور سوزوغم کی اذیت نے 
مجھے بہت ستایا اس عشق سے میں تو ہا رگئی۔
أتن نہ بھانواں سینگیں رووایا                           دھو تیں دا و یڑھا ڈھو لن پرایا
سہیلیوں کی محفل اچھی نہیں لگتی ہم جولیاں رلاتی ہیں،محلہ چغل خوروں کا ہے محبوب بھی پرایا بن گیا ہے
سنجڑی سسی نوں جبلیں رولایا                             ہے ہے پنل ول پھیرانہ پایا
بد نصیب سسی کو پہاڑوں میں بھٹکتا چھوڑ کر ، ہائے صد افسوس، پنوں نہ أیا۔
پوریں پرائیں دالڑ ی نوں                                  تایا پیڑیں پرانی سکھڑ ا ونجایا
تفکرات کی یلغارنے دل جلادیا اور درد ویر ینہ نے سکون وأرام ختم کر دیا۔
خوشیاں وہانیاں سانول سدھایا                                    گل گیا فریداجوبن اجایا
محبوب چلاگیا تو سبھی خوشیاں بھی چلی گئیں۔فریدا میراعہدشباب ضائع ہو گیا۔

کافی نمبر17
مصرعے 17                            168الفاظ                          ’’راگ تلنگ‘‘
’’مان مہیندا چاک‘‘
مان مہیندا چاک   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ساڈے من بھانوندا
بھینسوں کا چرواہا میرے من کو بھا گیا۔
ہردم ہوویں کولے میڈے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  کر رکھاں دال پاک
وتاں  گلکڑ  پا نوندا

تو ہر دم میرے ساتھ رہے اور میں تجھے تعویذ کی طرح پہنے
رہوں تا کہ تو ہر وقت میرے سینے سے لگا رہے۔
راتیں روندیں تپدیں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   کھپدیں پرہ گئی ہم باکھ
کیوں گل نئی  لا نودا

راتیں روتے پیٹیتے، صبح کرتی ہوں۔أخرتومجھے کیوں گلے نہیں لگاتا۔

سانو نسہجوں مینگھ ملہاراں   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  أئی ملن د ی مد ساکھ
نیڑا جیڑا  تانودا

ساون کا پر مسرت مہئنہ ہے،ابرألودفظا ہے۔ملنے کا موسم ہے ، جوش محبت کسی پہلو چین نہیں دیتا۔
ُُُُُدردوں ٹھڈڑیاں ساواں      ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔     کڈھدی رو رو ڈیواں پاک 
ڈکھڑا انگ نہ مانودا
شدت سے اہیں بھرتی ہوں اور چیخ چیخ کر روتی ہوں، فریادیں کرتیہوں،بارغم اُٹھائے نہں اٹھتا۔
نال ’’فرید ‘‘دے سچ نہ کیتو  ۔۔۔۔  أنون دی گیؤں أکھ   ۔۔۔۔۔۔۔  سو ہنا ول نہیں أوندا
فرید کے ساتھ تم نے وفا نہ کی ۔أنے کا کہہ کے گئے پھرواپس نہ آئے۔

کافی نمبر18
مصرعے  16                                      71 الفاظ                           ’’راگ بھیروی؍تلنگ‘‘
مساگ ملیندی
مساگ ملیندی دا گزر گییا ڈینہہ سارا   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  سنگار کریندی دا گزر گییا ڈینہہ سارا
تیرے لیے دنداسہ ملا ،سنگار کیا،اور سارا دن تیرے انتظار میں گزار دیا۔
کجلہ پایم سرخی لایم کیتم یار و سارا
آنکھوں میں کاجل ڈالا ،ہونٹوں پہ سرخی لگائی لیکن محبوب نے بھول کر یاد نہ کیا۔
کانگ اوڈ یندیں عمر وہا نی آیا نہ یار پیارا
قاصدکوے کے ذریعے پیغام بھیجتے عمر بیت گئی لیکن وہ نہ آیا۔
روہ  ڈونگر تے جنگل بیلا رولیم شوق آوارا
دشوار گزر کوہستانی راہگزاروں اور دشت و بیا بانیوں میں اس شوق آوارگی نے مجھے بھٹکائے رکھا۔
ہک دم عیش دی سیجھ نہ مانڑیم بخت نہ ڈتڑم واڑا

عیش کا ایک پل نصیب نہ ہوا ،بخت نے یاوری نہ کی۔
پڑھ بسم اللہ گھولیم سرکوں چاتم عشق اجارا
بسم اللہ پڑھ کر میں نے اپنا سر قربان کر دیا اورعشق کی ذمہ داری قبول کر لی۔
رانجھن میڈا میں رانجھن دی روز ازل دا کارا
محبوب میرا ہے اور میں محبوب کا ہوں ، یہ تو روز ازل سے طے ہوگیا تھا۔
ہجر فرید النبی لائی جل گیوم مفت وچارا
ہجرو فراق کی آتش سوزاں میں’’ فرید ‘‘بیچارہ مفت میں جل گیا۔

کافی نمبر 19
مصرعے 42                         180 الفاظ                            راگ ٹوڈی
نام اللہ دے
نام اللہ دے پاندھیڑا میڈا لے سنیہڑا جا
اے مسافر!خدا کے واسطے میرا پیغام لے جا

آکھیں بھٹ گھت دروہ، پریت کوں یار نہ وٹٹرا لا
اس سے کہنا، اب تو مکروفریب سے باز آجا، اور عشق کے نام کوداغدار نہ کر۔

جیویں جیویں کنڑھ ڈے گیا ہیں اُویں مُنہ ڈے آ
جس طرح اچانک پیٹھ پھیرے گئے تھے ، اسی طرح اچانک آکرمجھے اپنا منہ دکھا۔
ہے ہے ظالم نیت مرادئی تھولے کھوٹ کما۔

ہائے ہائے ظالم ، اتنا فریب نہ کر ، جیسی نیت وسیا پھل ملے گا۔
پیچ فریبیں چالیں والی ڈھولن ریت وٹا
مکروفریب کی چالیں چھوڑ اور اپنا انداز بدل ۔
کر کے سنگت ، سانگ بیگانے بٹیھوں من پرچا
غیروں کے سا تھ دوستی کر کے تواپنا دل بہلا بیٹھا۔
بیا ہے کون کہنیدا توں ہیں ساڈے بار اٹھا
اور کون کسی کے کام آتا ہے، تو ہی ہماری ذمہ داری اُٹھا۔
سس نناناں مارم طعنے مہنٹیں ڈیوم ما
ساس نندیں طعنے دیتی ہیں اور ماں ملامتیں کر تی ہے ۔
آکر ماہی دیدیں دیرے دل وچ جھوکاں لا
میرے پاس آ، میری آنکھوں میں قیام کر، میرے دل میں بسیرا کر۔
نہ کڑھ گالہیں نہ ڈے منرڑے واتوں سمجھ الا
مجھے برُا بھلا نہ کہہ، کچھ تو میرا لحاظ کر۔
یاری لایو، لا نہ جا تو محض نہ آ یو ڈا
دوستی تو تم نے کر لی ، لیکن تمہیں دوستی کرنی آئی نہ ۔
جھور جھرانے جند دا جوکھوں ڈتڑس ماس سکا
آلام وافکار، جان جو کھوں کا کام ہے، خون تک خشک ہوگیا۔

ڈٹھٹرے باجھوں کیویں جتراں برہوں لگا ہڈ تا
تجھے دیکھے بغیر کیسے حوصلہ کروں ، عشق نے میرا اندر تک جلادیا ہے ۔
سکھنیں نہ ڈے یار الانبھے کر کجھ کان حیا
صرف طعنے زنی اخیتار نہ کر، کچھ تومیرا لخاظ کر۔
سوہنی نال نبھاوے ہر کوئی کوجھی نال نبھا
حسین کے ساتھ تو ہر کوئی نباہ کرتا ہے ، بد صورت کے ساتھ نبھاو تو جانیں۔
جلدی آنویں نہ چر لاویں ساہ تے نہم
جلدی آنا، دیر انہ کرنا ۔ سانس کا کیا اعتبار۔
ڈے کر ساڈی بانہہ سراندی سو ہی سیجھ سُہا
ہمارے گلے میں باہیں ڈال کر اس رنگین سیج کو رونق بخش۔
تیں کن سانول دلڑی آپے آ ویچم سر چا
میر ے محبوب میں خود ہی تیرے پاس آئی اور خوشی سے اپنا  دل تیرے حوالے کردیا۔
بے ٹھائی گزران نہ بھلی بٹھ پیا کوڑ نبھا
جب دل ہی نہیں ملے ، تو پھر ایسی جھوٹی رفاقت کا کیا فائدہ؟
چاڑھیں توڑ نہ رہ وچ رولیں رکھناں یاد وفا

منزل پر پہنچا نا، راستہ میں بھٹکتا نہ چھوڑ دنیا اور میری وفا ہمیشہ پر یاد رکھنا۔
الگن فرید دے بھورل جانی سہجوں آ پوں پا
کبھی تو اے میرے چاند چہرہ محبوب ،میرے آنگن میں قدم رنجہ فرما۔

کافی نمبر20
  مصرعے 40                                 186الفاظ                    "راگ تلنگ۔بھیروی"
" سوہنٹے داورتارہ"
       واہ واہ سوہنٹے دا  ورتارا                                     ہر صورت وچ کرے اوتارا
  ہک جا چاوے عشق اجارا                                    بّی جا ڈیوے حسن ادھارا

سبحان اللہ اس صاحب جمال کا کیا انداز ہے، ہر صورت میں جلوہ فرماہے ایک جگہ خودہی عشق کی ذمہ داری اٹھاتا ہے اوردوسری جگہ پیکر حسن وجمال بن کرسامنے آتا ہے۔
            او مالک میں ادنی سگ دا                                         ہر صورت وچ مٹھڑا لگدا       
    میں کیا موہ لئیس من جگ دا                                              مار یس ہر جا ناز نکارا  
     
وہ مالک،میں سگ آستاں،وہ ہر صورت میں مجھے پیارا لگتا ہے۔میری کیا حیثیت ہے اس نے تو تمام کائنات کو موہ لیا ہے اوراس کے نازواندازکا ہر جگہ نکارہ بج رہا ہے۔
      میں بے آس امید دا ما نا                                              ہر کس ناکس دے من بھانا
    دوست اویڑا یار ایانا                                                 ہر ہک دل کوں لگے پیارا

مجھ مایوس وناامیدکاوہی سہارا ہے وہ،صرف میرا ہی نہیں
ہر ایک کا محبوب ہے،وہ بہت ہی سخت مزاج اور معصوم دوست ہے اور ہردل پسندیدہ ہے۔
جو میں دانگ بجھارت بجھدا                                              سوتھیا واقف ساری گبجھ دا
ہرگز دخل نہیں کہیں کجھ دا                                             جان نظارہ یار دا سارا 
        
جو میری طرح الجھی گتھیاں سلجھا لیتاہے، وہ تمام اسرارورموز کاواقف ہو جاتا ہے،یہاں پر کسی اورکاعمل دخل نہیں،یہاں توسارااسی کا نظارہ ہے۔

چرن گرو دے سیس نوائیں                                                  جو آکھے چم اکھیاں چائیں    
جہد جہاد دا بار اٹھائیں                                                  قرب کمال ہئی مطلب بارا

اپنے مرشدکے قدموں میں سرنگوں ہو جاؤ،جو کچھ وہ کہے اس کی بسروچشم تعمیل کرو کیوں کہ غیرمعمولی ریاضت واطاعت سے ہی قرب کمال کا مقصود حاصل ہو سکتا ہے۔
تھی گر پیر دا چیلا سچا                                                   نہ ہو قدم ہٹا کر کچا   
برہوں کڑاہ چڑھیا مچ مچیا                                                 جل بل مار انا دا نعرہ       

اپنے استاد اور مرشد کاسچا اور پکاپیروکاربن۔بڑھاہواقدام پیچھے ہٹا کر توہین ارادت نہ کر۔عشق نے تیرے لیے آگ کا الاؤ روشن کر رکھا ہے بے خطراس میں کود جا اور جلتے بھنتے
’’اناالحق‘‘کا نعرہ بلند کر۔
جو کوئی رکھسی اے گن چارے                                                    جود، اتے جگ جو گ جگارے 
ونج خوش و سسی شام دوارے                                                         رہسی جنم جگت توں نیارا   

جو کوئی یہ چار خوبیاں اپنائے گا ضبط نفس،جودوسخا، عبادت وریاضت اورشب بیداری،اسے محبوب کی چوکھٹ نصیب ہو گی اور وہ دنیاوی آلائشوں سے بے نیاز ہو کر منفرد
زندگی گزارے گا۔
جگرت سپن سکوپت ٹریا                                                              تیڈی سیر دے سانگے جڑیا   
جیندا پیر سنجانوں تُھڑیا                                                            پھر سی تھی چو گوٹھ آوارہ  

یہ جہان موجود،عالم رویاء،عالم ارواح اور عالم بے رنگی،یہ سبھی تمہارے مشاہدے اور سیرکے لیے بنائے گئے ہیں،لیکن جس کا بھی پاؤں ایک دفعہ لغزش کھا گیا،وہ ہمیشہ
کیلئے بھٹک گیا۔

توں ہیں سمجھ، سنجان نہ چھوڑیں                                                                نرگن سرگن وچ جا جوڑیں                   
اپنے آپ توں مونہہ نہ موڑیں                                                              سب ہے روپ سروپ تہارا
                
دراصل وہ تو ہی ہے جس کی تجھے تلاش ہے اورذات وصفات کے تمام مسالک ومظاہرکو بھی ایک ہی ذاتی وصفاتی انداز سمجھ کر اپنے آپ سے منہ موڑ ،اپنے آپ کو
پہچان یہ سب تمہارا ہی روپ سروپ ہے۔

چاروں بید بدانت پکارن                                                          اوم برم نارائن دھارن         
آتم اوتم روپ سدھارن                                                           دویت فرید ہے جو ٹھا لارا         

چاروں بید شاستر پکارپکار کر کہہ رہے ہیں کہ وہ’’قادر مطلق‘‘خالق کائنات کا روپ اختیار کرے یارب الارباب کا یا روح مطلق کا۔ہے تو وہی
ایک ہی ’’فرید‘‘ دوئی تو ایک دھوکہ ہے۔

 

کافی نمبر ۲۱
 مصرے.14.               الفاظ .53                ’’راگ بھیری‘‘
’’یار بروچل‘‘
ہے! ہے! یار بروچل           ہک تل ترس نہ کیتا
کر کے سخت نمانی            اپنے نال نہ کیتا

ہائے صد افسوس محبوب نے مجھ پر ذرہ برابر ترس نہ کھایا،
اور مجھ بیچاری کو اپنے ساتھ نہ لے گیا۔
ہجر پیالہ ازلوں            میں مٹھری لو پیتا
روز ازل سے ہی اس بد نصیب نے ہجروفراق کا زہر،پیالہ
میں گھول کر پی گیا۔
جئیں ڈینھ سجن سدھائے           ڈکھ آیا سکھ بیتا
جس دن میرا محبوب چلا گیا،اس دن سے دکھ آ گیا،سکھ چلا گیا۔
سول کللڑا کوجھا               لوں لوں رگ رگ سیتا
درد و غم کے الجھے اور بد نما کانٹے میرے رواں رواں اور
رگ رگ میںیوں پوست ہو گئے ہیں جیسے ساتھ سل گئے ہوں۔
اصلوں محض وساریس        لا کر پرم پلیتا
اس نے میرے اندر محبت کی آگ لگا کر مجھے بالکل فراموش کر دیا۔
روہ فرید لتاڑوں        شالا کھادم چیتا
’’فرید‘‘میں پہاڑوں کو روندتا پھر رہا ہوں۔خدا کرے مجھے چیتا کھا جائے۔

کافی نمبر۲۲
مصرے.22 .                                الفاظ.129.                               ’’راگ بھیروی‘‘

’’اتھاں میں مٹھٹری‘‘

اتھاں میں مٹھٹری نت جان بہ لب                     اوتاں خوش وسدا وچ ملک عرب
یہاں پر میں بد نصیب جان کنی میں مبتلا ہوں، لیکن وہ ملک
عرب میں خوش و خرم بس رہا ہے۔
ہر ویلھے یار دی تانگھ لگی                          سنجے سینے سک دی سانگ لگی
ڈکھی دلڑی دے ہتھ تانگھ لگی                     تھئے مل مل سول سولے سب

ہر وقت اس کا جان لیوا انتظار ہے،ویران سینے میں اس کے اشتیاق کا تیر آر پار ہے اور غمزدہ دل کا واحد سہارا صرف انتظار اور غم و آلام کا حجوم ہے جو میرے اندر جمع ہو گیا ہے۔
تتی تھی جو گن چودھا پھراں                         ہند، سندھ، پنجاب تے ماڑ پھراں   
سنح بار تے شہر بزار پھراں                        متاں یار ملم کہیں سانگ سبب

میں سوختہ جان جو گن بن کے چاروں اور تجھے تلاش کر رہی ہوں، ہند ،پنجاب اور مارواڑ میں تجھے تلاش کیا اور ویرانوں اور شہروں میں تجھے تلاش کیا کہ شاید کسی طرح تو مجھے مل جاے۔
جیں ڈینہہ دانیہہ دے شنیہہ پھٹیا                        لگی نیش ڈکھاں دی عیش گھٹیا
سر، جوبن جوش خروش ہٹیا                                   سکھ سڑ گے مرگی طرح طرب

جس دن سے مجھے عشق کے شیر نے زخمی کیا ہے اس دن سے دکھوں کے نشتر چبھ رہے ہیں۔ عیش و آرام قائم نہ رہا۔جوانی کا جوش و خروش مٹ گیا۔ خوشیوں کے پھول مر جھا گئے،نشاط و طرب کی محفلیں اجڑ گئیں
توڑیں دھکڑے دھوڑے کھاندڑیاں                           تیرے نام تے مفت وکاندڑیاں
تیدی باندیاں دی میں باندڑیاں                            ہے در دیاں کتیاں نال ادب

چاہے میں ٹھوکریں کھا رہی ہوں پھر بھی تیرے نام پہ نکی ہوئی ہوں،تیرے غلاموں کی غلام ہوں،تیرے تو سگ آستان بھی میرے لیے باعث احترام ہیں۔

واہ سوہنا ڈھولن یار سجن                              واہ سانول ہوت حجاز وطن
آ ڈیکھ فرید دا بیت حزن                              ہم روز ازل دی تانگھ طلب

سبحان اللہ تو کیسا پیکر حسن و جمال ہے،تو حجاز کا کیسا محبوب ملیح ہے، آکر کبھی فرید کا غم کدہ تو دیکھ، میں تو روزازل سے تیرا طلبگار ہوں۔

 

کافی نمبر۔۲۳
مصرعے۔۱۰۴۔                الفاظ ۔۴۹۹۔                  ’’راگ بھیروی‘‘
’’سن سمجھ رے زاہد‘‘
سن سمجھ رے زاہد رے جاہد توں                                ہن عشق دے اے کلمات عجب
ہے گا لھ عجب ہے حال عجب                                    ہے چال عجب ہے گھات عجب

اے زاہد اے برائیوں کے خلاف جہاد کرنے والے ،میری بات غور سے سن عشق بڑی انو کھی چیز ہے ،اس کے کلمات ،حالات ،اس کی گھات،اس کی داستان ،اس کےاحوال ،سبھی کچھ عجیب و غریب ہیں۔
ہے ذوق عجب ہے شوق عجب                                  ہے عین عجب ہے بین عجب
ہے ذکر عجب ہے فکر عجب                                   ہے نفی عجب اثبات عجب

اس کا ذوق وشوق عجیب ہے اس کا ہجرووصال بھی عجیب ہے کیفیت عشق میں ما سواللہ کی نفی ،اور پھر تعینات کا اثبات بھی عجیب ہے
کل تا نگھ طلب منقود کرن                                   سبھ صورت حق مسجود کرن
تھی با ذل ترک وجود کرن                                  سک صوم صلوۃزکوۃعجب

ان کیفیات میں نہ کو ئی غیر اللہ ان کے سامنے ہوتاہے نہ اس کی طلب ہوتی ہے بلکہ تمام صورتیں مظہرحق کے طور پر مسجودہو تی ہیں ،وہ کبھی اپنے وجود سے بیگانہ ہوجاتے ہیں اور کبھی ان میں نماز ،روزہ،زکوۃ کا اشتیاق قابل دید ہوتا ہے

۱۰۳
حکمات عجب شبہات عجب                                                               درجات عجب درکات عجب
آیات عجب طاعات عجب                                                               طاغوت تے لات منات عجب
   
منازل عرفات کے احکامات بھی عجیب اور شبہات بھی عجیب ہیں ۔وہاں کے مدارج اعلٰی بھی عجیب ہیں اور وہاں کے مدارج ادنٰی بھی عجیب ہیں،وہاں کے آثار وعلامتیں اور ذوق بندگی بھی عجیب اور شیطانوں کا سامنا بھی عجیب۔
ہک ذاتوں سہنس ذوات عجب                                                         اسمال افعال صفات عجب
خوش خضر دے فلسفیات عجب                                                       ظلات تے آب حیات عجب
   
ایک ذات سے سینکڑوں ذاتوں کا ظہور پزیر ہونا بھی عجیب ہے اور ان کے نام ان کے کام اور ان کیے خصوصیات بھی عجب خوش نصیب خضر کے فلسفے بھی عجیب اور بحر ظلمات کو عبو رکر کے آب حیات کا حصول بھی عجیب۔
ٹھپ فقہ اصول عقائد نوں                                                      رکھ ملت ابن العربی دی      
ہے دلڑی غیروں پاک تری                                                      مصباح عجب مشکوۃ عجب
   
فقہ اصول کی کتابوں کو بند کر کے رکھ دے ۔ابن العربی کامسلک اختیار کر، تیرا دل غیر کی محبت سے پاک ہے ۔یہی چراغ ہدایت ہے اس کی رو شنی بھی عجب ہے اور اس کا نور بھی عجب۔

کافی نمبر ۲۱
۔۱۴ ۔مصرے                                          ۔۵۳ ۔الفاظ                                            ’’راگ بھیری‘‘
’’یار بروچل‘‘
ہے! ہے! یار بروچل                                                  ہک تل ترس نہ کیتا
کر کے سخت نمانی                                                   اپنے نال نہ کیتا

ہائے صد افسوس محبوب نے مجھ پر ذرہ برابر ترس نہ کھایا اور مجھ بیچاری کو اپنے ساتھ نہ لے گیا۔
ہجر پیالہ ازلوں                                               میں مٹھری لو پیتا    
روز ازل سے ہی اس بد نصیب نے ہجروفراق کا زہر،پیالہ میں گھول کر پی گیا۔
جئیں ڈینھ سجن سدھائے                                         ڈکھ آیا سکھ بیتا
جس دن میرا محبوب چلا گیا،اس دن سے دکھ آ گیا،سکھ چلا گیا۔
سول کللڑا کوجھا لوں                                     لوں رگ رگ سیتا        
درد و غم کے الجھے اور بد نما کانٹے میرے رواں رواں اور رگ رگ میںیوں پوست ہو گئے ہیں جیسے ساتھ سل گئے ہوں۔
اصلوں محض وساریس                                           لا کر پرم پلیتا    
اس نے میرے اندر محبت کی آگ لگا کر مجھے بالکل فراموش کر دیا۔
روہ فرید لتاڑوں                                            شالا کھادم چیتا          
’’فرید‘‘میں پہاڑوں کو روندتا پھر رہا ہوں۔خدا کرے مجھے چیتا کھا جائے۔

 

کافی نمبر ۲۲
۔۲۲۔مصرے                                                   ۔ ۱۲۹۔الفاظ                                                  ’’راگ بھیروی‘‘

’’اتھاں میں مٹھٹری‘‘
اتھاں میں مٹھٹری نت جان بہ لب                                             اوتاں خوش وسدا وچ ملک عرب
یہاں پر میں بد نصیب جان کنی میں مبتلا ہوں، لیکن وہ ملک عرب میں خوش و خرم بس رہا ہے۔
ہر ویلھے یار دی تانگھ لگی                                                    سنجے سینے سک دی سانگ لگی
ڈکھی دلڑی دے ہتھ تانگھ لگی                                              تھئے مل مل سول سولے سب

ہر وقت اس کا جان لیوا انتظار ہے،ویران سینے میں اس کے اشتیاق کا تیر آر پار ہے اور غمزدہ دل کا واحد سہارا صرف انتظار اور غم و آلام کا حجوم ہے جو میرے اندر جمع ہو گیا ہے۔
تتی تھی جو گن چودھا پھراں                                            ہند، سندھ، پنجاب تے ماڑ پھراں           
سنح بار تے شہر بزار پھراں                                               متاں یار ملم کہیں سانگ سبب
     
میں سوختہ جان جو گن بن کے چاروں اور تجھے تلاش کر رہی ہوں، ہند ،پنجاب اور مارواڑ میں تجھے تلاش کیا اور ویرانوں اور شہروں میں تجھے تلاش کیا کہ شاید کسی طرح تو مجھے مل جاے۔
جیں ڈینہہ دانیہہ دے شنیہہ پھٹیا                                                  لگی نیش ڈکھاں دی عیش گھٹیا
سر، جوبن جوش خروش ہٹیا                                                سُکھ سڑ گے مرگی طرح طرب
          
جس دن سے مجھے عشق کے شیر نے زخمی کیا ہے اس دن سے دکھوں کے نشتر چبھ رہے ہیں۔ عیش و آرام قائم نہ رہا۔جوانی کا جوش و خروش مٹ گیا۔ خوشیوں کے پھول مر جھا گئے،نشاط و طرب کی محفلیں اجڑ گئیں
توڑیں دھکڑے دھوڑے کھاندڑیاں                                                 تیرے نام تے مفت وکاندڑیاں
تیدی باندیاں دی میں باندڑیاں                                                ہے در دیاں کتیاں نال ادب
    

واہ سوہنا ڈھولن یار سجن                                                 واہ سانول ہوت حجاز وطن       
آ ڈیکھ فرید دا بیت حزن                                               ہم روز ازل دی تانگھ طلب
         
سبحان اللہ تو کیسا پیکر حسن و جمال ہے،تو حجاز کا کیسا محبوب ملیح ہے، آکر کبھی فرید کا غم کدہ تو دیکھ، میں تو روزازل سے تیرا طلبگار ہوں۔

 

102
کافی نمبر۲۳
۔۱۰۴۔مصرعے                                 ۔ ۴۹۹ ۔الفاظ                                   ’’راگ بھیروی‘‘
’’سن سمجھ رے زاہد‘‘
سن سمجھ رے زاہد رے جاہد توں                                                ہن عشق دے اے کلمات عجب
ہے گا لھ عجب ہے حال عجب                                               ہے چال عجب ہے گھات عجب
   
اے زاہد اے برائیوں کے خلاف جہاد کرنے والے ،میری بات غور سے سن عشق بڑی انو کھی چیز ہے ،اس کےکلمات ،حالات ،اس کی گھات،اس کی داستان ،اس کے احوال ،سبھی کچھ عجیب و غریب ہیں۔
ہے ذوق عجب ہے شوق عجب                                                ہے عین عجب ہے بین عجب
ہے ذکر عجب ہے فکر عجب                                                ہے نفی عجب اثبات عجب

اس کا ذوق وشوق عجیب ہے اس کا ہجرووصال بھی عجیب ہے کیفیت عشق میں ما سواللہ کی نفی ،اور پھر تعینات کا اثبات بھی عجیب ہے
کل تا نگھ طلب منقود کرن                                                سبھ صورت حق مسجود کرن  
تھی با ذل ترک وجود کرن                                                سک صوم صلوۃزکوۃعجب
 
ان کیفیات میں نہ کو ئی غیر اللہ ان کے سامنے ہوتاہے نہ اس کی طلب ہوتی ہے بلکہ تمام صورتیں مظہرحق کے طورپر مسجودہو تی ہیں ،وہ کبھی اپنے وجود سے بیگانہ ہوجاتے ہیں اور کبھی ان میں نماز ،روزہ،زکوۃ کا اشتیاق قابل دید ہوتا ہے
۱۰۳
حکمات عجب شبہات عجب                                                     درجات عجب درکات عجب     
آیات عجب طاعات عجب                                                    طاغوت تے لات منات عجب
      
منازل عرفات کے احکامات بھی عجیب اور شبہات بھی عجیب ہیں ۔وہاں کے مدارج اعلٰی بھی عجیب ہیں اور وہاں کےمدارج ادنٰی بھی عجیب ہیں،وہاں کے آثار وعلامتیں اور ذوق بندگی بھی عجیب اور شیطانوں کا سامنا بھی عجیب۔
ہک ذاتوں سہنس ذوات عجب                                                اسمال افعال صفات عجب
خوش خضر دے فلسفیات عجب                                                 ظلات تے آب حیات عجب
   
ایک ذات سے سینکڑوں ذاتوں کا ظہور پزیر ہونا بھی عجیب ہے اور ان کے نام ان کے کام اور ان کیے خصوصیات بھی عجب خوش نصیب خضر کے فلسفے بھی عجیب اور بحر ظلمات کو عبو ر کر کے آب حیات کا حصول بھی عجیب۔
ٹھپ فقہ اصول عقائد نوں                                                   رکھ ملت ابن العربی دی   
ہے دلڑی غیروں پاک تری                                                  مصباح عجب مشکوۃ عجب

فقہ اصول کی کتابوں کو بند کر کے رکھ دے ۔ابن العربی کا مسلک اختیار کر، تیرا دل غیر کی محبت سے پاک ہے ۔یہی چراغ ہدایت ہے اس کی رو شنی بھی عجب ہے اور اس کا نور بھی عجب۔

۱۰۴
حرکات عجب سکنات عجب                                                   اشغال عجب اوقات عجب       
اوراد عجب وعوات عجب                                               ساعات عجب ڈینہہ رات عجب
           
اس کا تحرک بھی عجب، اس کا جمود بھی عجب ،اس کے شغل بھی عجب ،اس کے لمحات کیف بھی عجب،اور ادووظائف کا
لطف بھی عجب اور لمحات اور دن رات ک کیفیات بھی عجب۔
        ’’  لا ید رک الابصار‘‘ عجب                              ’’لا یحجبہ الاشکال ‘‘عجب
ہے بحر عجب ہے لہر عجب                             ہے نہر عجب قطرات وجب

لایدرک الابصار اور لایحجبہ الاشکال کے احکامات بھی عجیب ہیں یہ بحر پیکر بیکراں بھی عجیب، اس میں اٹھنے والی لہریں بھی عجیب ۔اس میں سے نکلنے والی نہریں اور ان میں موجود قطرے بھی عجیب۔
آفات عجب خدشات عجب                            صدمات عجب حسرات عجب
واہ جزبتہ من جذبات عجب                             راحات عجب لذات عجب

سالک کو راستے میں جن آفات و خدشات ،صدمات اور حسرات سے واسطہ پڑتا ہے وہ بھی عجیب ہیں اور تمام جذبات میں سے اس جذبہ عشق کی راحتیں اور ذلتیں بھی عجیب۔
(۱)لا یدرک الابصار (۲) یحجبہ الاشکال
آنکھیں اس کا ادراک نہیں کر سکتیں شکلیں اسے چھپا نہیں سکتیں
ناسوت عجب ملکوت عجب                                      جبروت عجب لاہوت عجب
تلبیس عجب تانیس عجب                                      تقدیس عجب سطوٰات عجب

عالم ظاہر ،عالم ارواح ، عالم صفات اور عالم ذات بھی عجب بشری لباس میں ظاہر ہونا ، انس و موت سے سرفراز ہونااور
پاکیزگی اور شان و شوکت حاصل کرنا بھی۔
ادہا م عجب ابہام عجب                                          اعلام عجب الہام عجب
ہمزات عجب خطرات عجب                                         لمحات عجب شطحات عجب

تو ہمات اور وساوس شیطانی سے دو چار ہونا بھی عجیب اور مختلف وارداتوں اور تجربوں سے گزرنا بھی عجب ،خطروں اور وسوسوں سے دو چار ہونا بھی عجب اور لمحات جذب و مستی اور ان کی موجودگی میں نکلنے والے کلمات تحیر بھی عجب۔
ہے قرب عجب ہے بعد عجب                                           ہے وصل عجب ہے فصل عجب
ہے قہر حجاب عقاب عجب                                            ہے لطف نجات سبات عجب

قرب حق اور دوری بھی عجب ،وصالو جدائی بھی عجب حجاب کا قہر بھی عجب اور سزا بھی عجب،مد ہوشی بھی عجب اور
اس سے نجات کا لطف بھی عجب۔

کا فی نمبر ۲۵
۔۲۶۔ مصرعے                 ۔۱۴۱۔ الفاظ                    ’’راگ ٹو ڈی ‘‘

’’پیا عشق اساڈی آن سنگت‘‘

پیا عشق اساڈی آن سنگت                                                  گئی شد مد زیر زبر دی بھت
عشق سے ہماری اس طرح دوستی ہوئی کہ باقیٍ سب پڑھا لکھا بھول گیا۔
سب وسرے علم علوم اساں                                                   کل بھل گئے رسم رسوم اساں
ہے باقی درد دی دھوم اساں                                                 بئی برہوں یاد رہیو سے گت

تمام علوم و فنون بھول گئے، رسم و رواج یاد نہ رہےصرف درد و سوز کی لذت یاد رہے اور نغمہ محبت یاد رہا
انہاں جھوٹیاں غیراں ویریاں توں                                              انہاں کوڑیاں کھیڑیاں بھیڑیاں توں
انہاں کوجھیاں گیڑیاں پیڑیاں توں                                     ہر ویلھے یار گھنم ڈت پت

میرا محبوب ہر وقت میرے بد باطن،منفی مزاج اور فتنہ پرداز مخالفین سے میری صفائی لیتا رہتا ہے۔
کر صبر تے شکر شکا یت تے                                              رکھ ا آس امید عنایت تے
پے فخر دی فقر ولا یت تے                                             ڈینہہ راتیں دلڑی ڈیوم مت

شکا یت نہ کر و،صبر شکر کر ،ا س کی عنایتوں پر نظر رکھ ،ا ور اپنے مرشد حضر ت فخر جہا ن کے فقر و ولا یت کو سامنے رکھ
دن رات میرا دل مجھے یہی تلقین کر تا رہتا ہے۔
مٹھی گلڑیں شہر وکھو ہیں دی                                            تتی ملک ملامت ڈوہیں دی
سنجی روہی راوے روہیں دی                                            ڈتی خلعت یار بروچل جت

مجھے شہر بھر میں لگائی جانے والی تہمتوں نے اور ملامتوں نے برباد کر دیا مجھے میرے شتر بان محبوب نے صرف روہی کے
ویرانے عطا کیے ہیں۔
نت کھانواں ڈکھڑیں توں مک لت                                           ہاں آکھن ! نیڑا لیسیں وت
کڈیں ووئے توئے تے کڈیں ہا ہت                                          ڈے در کے خوب نپیڑ ن ست

میں ہمیشہ دکھ درد کی زد میں ہوں، وہ مجھ سے پوچھتے ہیں عشق کرو گے، کبھی وہ میرے ساتھ تلخی سے پیش آتے ہیں
اور کبھی آزما ئشوں میں مبتلا کر کے میرا خو ن نچوڑ لیتے ہیں۔
سٹ کلہڑی یار فرید گیا                                                    ایہو حال نمانی نال تھیا
فریا د کراں کر یا د پیا                                                  ہتھ مل مل بیٹھی روداں رت
         
مجھے اکیلا چھو ڑ ’ ’ فرید ‘‘ میرا دو ست چلا گیا اب تو میرا یہ حال کہ اس یاد کر کر کے فر یا دیں کرتی ہو ں اور ہا تھ مل مل کے خو ن کے آنسو بہاتی ہوں۔

کا فی نمبر 26

۔۲۲ ۔مصرعے
’’ میڈا مٹھر ا ماہنٹو ں‘‘
میڈا مٹھڑا ماہنو ں کاک جا                                                شالا رانا ایندم رات
کاک ندی کا رہنے والا، میرا پیارا ’’ رانا‘‘ اللہ اس کو آج رات میر ے پاس لے آئے۔
تیڈی سک دے کا ں ستی ہم                                              سومل کو ں گھن سات
تیرا انتطا ر کرتے کرتے میں اپنی ’’سومل ‘‘ کے ساتھ سو گئی تھی۔تو اسے غیر مرد سمجھا اور بد گمان ہو کر چلا گیا۔
پھیر سو ہا ئیں جیند یں ماڑیاں                                            تونیں ڈیہنہ چھ سات
میری زندگی میں پھر ان مکانات کو آکر آباد کر چاہے چھ سات دن کے لیے ہی سہی۔
سچ ڈ س جو کجھ کیتی ایہا                                             ماڑ دی ہئی مر جات    
سچ بتلا، جو عمل تو نے روا رکھا، کیا ماروڑ کے علاقے میں خلق و مروت کا یہی انداز ہے۔

123

کافی نمبر ۲۸
۔۳۲۔مصرعے                                          ۔۱۳۱۔الفاظ                                         ’’راگ باگیشری‘‘
’’یار یروچل‘‘
یار بروچل کان                                     رلدی روہ ڈونگر وچ
لایس جڑ کر پان                                     دلڑی جان جگر وچ

میں اپنے محبوب کی تلاش میں جنگلوں میں اور ویرانوں میں بھٹک رہی ہوں ۔اس نے میرے دل وجگر پر خوب تاک کر
تیر چلایا ہے ۔
سنگیاں سرتیاں کنتھ رجھایا                                 اپنے اپنے ڈھول کو پایا
میکوں میڈ ڑ ے مان                                     رولیا سنجڑے بر وچ

میری ہم عمر سہیلیوں نے اپنے اپنے محبوب رجھا لئے ،اپنےاپنے محبوب پا لئے لیکن مجھے میرے سرمایا افتخار محبوب نے
ویرانوں میں بھٹکنے کے لیے چھوڑ دیا۔
یار نہ پاواں بار اٹھاواں                                    نیر وہانواں گاون گاواں     
رکھ رکھ وین دی وان                                      ہر کوچے گھر گھر وچ

محبو ب کو اپنے سامنے نہیں پاتی تو ہجر کا بوجھ اٹھائے ہوئےآنسو بہاتی ہوں اور ہر ہر کوچے ہر ہر گھر پھرتی اور بین
کے اندر میں ماتم کرتی ہوں ۔

124
ریت تتی بیا دکھڑے گھاٹے                                                    کھڑئین کھوب گپاٹے گھاٹے
سٹ گیا جان پچھان                                                       کانی مار اندر وچ

گرم ریت ،گہرے دکھ اور اس پر دلدل، ناہموار زمین کلیف دہ راستے اور گہرائیاں ،وہ میرے سینے میں تیر چبھو کر
مجھے دیدہ دانستہ ان میں پھینک گیا۔
             حسن حقیقی نور حجازی                                                کھیڈے ناز نیاز دی بازی   
صدقوں سمجھ سنجان                                                    آیا کوٹ شہر وچ

حسن حقیقی نور حجازی جو اپنے عاشق سے نازو نیاز کےکھیل کھلتا ہے، ذرا غور سے دیکھ ،وہی نورازل کوٹ مٹھنص
کے شہر مین میرے مرشد پر جلوہ فگن ہے۔
          راہ اولڑے اوکھیاں گھاٹیاں                                                 چھبدے ککرے کنڈڑے کاٹھیاں 
   مارم سول وڈاں                                                   آیم ظلم قہر وچ

حسن حقیقی نور حجا زی جو اپنے عاشق سے نازو نیاز کےکھیل کھلتا ہے، ذرا غور سے دیکھ ،وہی نورازل کوٹ مٹھنص
کے شہر مین میرے مرشد پر جلوہ فگن ہے۔
پہلے ڈینہہ دی قسمت پٹھڑی                                                جمدی ویلھے امڑی مٹھڑی
ڈتڑا ڈکھ دا ڈان                                                            لوڑھیسں برہوں بحر وچ

روز ازل سے ہی میری قسمت میں یہی لکھا تھا،مجھے تو وقت پیدائش سے ہی میری بد نصیب ماں نے دکھوں کی گھٹی دی
اور بحر عشق میں ڈبویا۔
              درد فرید ہمیشہ ہووے                                            سارے پاپ دوئی دے دھووے
رہندی تانگھ تے تان                                           پہچا ن پریم نگر وچ

’’فرید‘‘ در عشق حقیقی تو ہمیشہ رہنا چاہیے۔یہشرک اور دوئی کے گنا دھو ڈالتا ہے ۔ اسکی وجہ سے یہ انتظار اور
کشش رہتی ہے کہ جلد پریم نگر میں پہنچ جاؤں۔

 
126
کافی نمبر۲۹
۔۲۰۔مصرعے                              ۔۶۷۔الفاظ                               راگ بھیروی
’’بٹھ گھت کوڑ‘‘
بٹھ گھت کوڑ نکمڑ یں                                             ہک حق کوں کر یاد
ترک کر دے دنیا کی جھوٹی ألائشیں ،صرف ایک اللہ کو یاد۔
تھی کر گیہلا رت پوں تے                                         کر دیں دھانہہ فریاد
خاک اور خون کے اس خاکی پتلے پردیوانہ ہوکر کیوںأہ وزاری کرے ہو۔
    باجھوں احد حقیقی                                              محض خراب أبا 
بغیر اس وحدہ لاسریک کے،باقی تمام چیزیں ویران اور ناکارہ ہیں۔
    حسن مجازی جو ٹھا                                                ہے ،فانی برباد۔
یہ مجازی حسن تو فانی ہے، اس میں جلد بر بادہو جانا ہے۔
      کتھ مجنوں کتھ لیلیٰ                                              کتھ شیریں فرہاد
کہاں ہے مجنوں کہاں ہے لیلیٰ، کدھر ہے شیریں کدھر ہے فرہاد۔

کل شے غیر خدا دی                                            ہاک بے بنیاد
سوائے ایک اللہ کی زات کے باقی تمام چیزیں فانی اور بے بنیادہیں۔
باجھ محبت زاتی                                                   کوجھا شور ، فساد   
بغیر حقیقی محبت کے ،باقی سب کچھ،صرف شوروفساد ہے۔
مرشد جہاں نے                                                  کیتم اے ارشاد   
میرے مر شد حضرت فخر جہاںؒ نے مجھے یہ ارشاد فرمایاتھا۔
عارف ابن العربی                                                  ساڈا ہے استاد
عارف کامل حضرت ابن العربی ہمارے استاد اور رہنما ہیں۔
سمجھ فرید ہمیشہ                                                      رہو غیر وں أزاد ۔
’’فرید ‘‘ ہمیشہ غیر کی محبت سے أزادرہنا۔

128
کافی نمبر۳۰
۔۳۰۔مصرعے                   ۔۴۰۔ الفاظ                      ’’راگ تلنگ‘‘
’’حسن ازل‘‘
حسن ازل دا تھیا اظہار                                    احدوں ویس وٹا تھی احمدؐ
حسن ازل ظہور پذیر ہوااور بھیس بدل کر’’احد‘‘ سے ’’احد ؐ ‘‘ ہو گیا۔
سلب ثبوت جتھاں مسلوبے                                  اتھ نہ طالب نہ مطلوبے
ہے ’’لا ید رکہ الا بصار‘‘                                 بے حد مطلق ، مطلق بے حد       
جہاں نہ معنی ہے نہ اثبات ہے وہاں نہ کوئی طالب ہے نہ مطلوب ہے کوئی أنکھ وہاں کا ادراک نہیں کر سکتی۔ اس پر
کسی چیز کا اطلاق بہیں ہو سکتا۔ وہ واقعی بے حدوبے حساب ’’مطلق‘‘ ہے۔
غیب الغیب دے دیسوںأیا                                   شہر شہادت دیرا لایا
احدیت دا گٹھنڈ اتار                                  تھیا اطلاقوں محض مقید
          
سرزمین غیب سے وہ اس عالم شہود میں تشریف لے أیا۔’’احدیت‘‘ کا نقاب اتاردیا اور لامحد ودسے محد ود ہو گیا۔
حق باطل سمجھ ہے حق ہے                                        پر اے راز یہوں مغلق ہے         
یار ہے یار یار ہے یار                                         سوہنُاکوجھا نیک اتے بد
       
حق ہو یا باطل ہو، ان سب میں وہی موجود ہے لیکن یہ مسئلہ نہت الجھا ہوا ہے ، ہر کسی میں میرا محبوب جلوہ فرما ہے، چاہے وہ
چاہے بد‘ چاہے خوبصورت ہو چاہے بد صورت
اگئی تقلید أئی تحقیقے                                           تھئے واضح مکشوف دقیقے              
فاش مبین کل اسرار                                          برزخ زیر زیر شد مد
          
سنی سنائی پہ عمل کرنے کا دور گزر گیا کیونکہ اب تو ہم پہ حقائق اپنی باریکیوں سمت ظاہر ہو گئے ہیں اور بر زخ اور سرلاالہ اور اس کے اسراروروموز
واضح طلو پر منکشف ہو چکے ہیں۔

کافی نمبر۳۱
۔۲۳۔مصرعے                        ۔۱۱۹۔الفاظ                           ،، راگ تلنگ،،
،، سن وو سہیلی،،
سن و ےسہیلی سگھڑ سیانی برہوں دے پندھڑے سخت لبعید
اے میری دانشمند سہلیے، میری بات غور سے سن !ہجرو فراق کی مسافتیں بہت طویل ہوتی ہیں ۔
نہ کل میکوں تیغ قضا دی نہ تقدیر د ے تیر وغا دی
کیتم دوست دی دید شہید

نہ تو محجے شمشیر کی خبر ہے نہ محجے تقدیر کے آمادہ بہ جنگ ہونے کا ہے ، مجھے تو صر ف یہ پتہ ہے کہ مجھے اس کی دید
نے شہید کر دیا ۔
ہے ڈینہہ بھلڑے متر وی بھلڑے قسمت جوڑے جو ڑ کللڑے
یار شدید تے نجت عنید

قسمت اچھی تو دوست بھی اچھے ،لیکن میری قسمت نےمیرے ساتھ معاونت نہیں کی۔اس لیے دوست سخت گیر
اور خوش بختی کنار ہ کش ہے۔
ر ودن پٹن کوں سمجھو ں شادی سنج بر جھر جھنگ ڈسم آبادی
عشرہ محر م ساڈڑی عید

آہ زاری میں راحت محسوس ہوتی ہے ،ویرانے ،آبادی کی طرح دکھا ئی دیتے ہیں ۔اسی لیے تو ہماری عیدبھی عشرہ محرم
سکی طرح سو گوار گزرتی ہے۔
سو سو چھانگاں لکھ لکھ چھڑو وٹھٹرے دی ووہ ڈیون پندھٹرو
روہی تھی آباد جدید

روہی سے آنے والوں نے خوشبری دی ہے کہ پہ بارش کے سبب ہر طرف ہر یالی اور سینکٹروں مویشنوں اور لاکھوں چرواہوں کی وجہ سے ہر طرف
رونق ہے۔
جند اسیرے جور و جفا دی دلٹری قیدی کرب و بلا دی
ڈسم رقیب یزد پلید

جان اسیر جفا،دل مبتلائے کرب و بلا ، اس کیفیت میں مجھے اپنا رقیب یزد کی طرح قابل نفرت دکھاہی دیتا ہے۔
سانول یار دے ناز نگہ دے مارو چال تے خال سیہ دے
تھیو سے مفت فرید خرید

اے فرید ،ہم تو اپنے محبوب ملیح کی ناز نگاہی،قیامت رفتاری اور خال سیاہ کے خرید کیے ہوئے ہیں۔

 

 کافی نمبر 32
۔10 مصرعے                                            114الفاظ                                            "راگ بھیروی"
"یار کوں کر مسجود"
یار کوں کر مسجود چھَڈ ڈے بیو معبود
صرف اپنے رب کو سجدہ کر، باقی تمام دنیاوی معبود چھوڑ دے ۔
ہر صورت وِچ یار کو ں جانیَں غیر نہیں موجود
ہر صورت میں اُسی کا جلوہ دیکھ ، غیر اللہ تو کچھ ہے ہی نہیں ۔
سبھ اعداد کوں سمجھیں واحد کثرت ہئی مفقود
کثرت کو بھی واحد سمجھو، کیونکہ اِس کائنا ت میں صرف وہی زات واحد ہر جگہ موجود ہے،
(کثرت توصرف فریبِ نظر ہے)
فخرالدین مِٹھل د ے شوقوں دَم دَم نکلم دود
مرشد حضرت فخرالدین کی لگائی ہوئی آتشِ عشق کا وہ عالم ہے کہ ہر ہر سانس سے دھواں نکلتا ہے۔
َوصل فرید کوں حا صل ہو یا جب ہو گِیا نابود
فرید! جب اپنا آپ مِٹ گیا تو پھر وصالِ حقیقی نصیب ہوا ۔
(ہر تمنا دل سے رُخصت ہو گئی اب تو آ جا اب تو خلوت ہو گئی
)

 

کافی نمبر33
۔23 مصرعے                                          116 الفاظ                                            "راگ پہاڑی"
"اساں کنوں دِل چایو"


اساں کنوں دِل چایو وے یار جَا پے کِتھا ں وَنج لایو وے یار
اے دوست ہم سے تمہارا دل اُکتا گیا، نہ جانے کس سے جا کر دل لگا لیا ۔
یار بروچل کیچ دا والی کیتو حال کنوں بے حالی
پر بت روہ رُلایو وے یار
اے میرے کیچ کے حکمران ، تم نے میرا حال ابتر کر دیا اور مجھے کوہ ساروں اور پہاڑوں میں بھٹکنے کیلئے چھوڑ دیا
ملک ملہیر وٹیونی جھوکاں میں کلہڑی وِچ اُپریاں لوکاں
ہک تِل ترس نہ آیو و ے یار
تم نے ملہیر جیسے سر سبز شاداب علاقے میں اپنا ٹھکانا کر لیا ۔اِدھر میں غیروں کے درمیان اکیلی ہوں تمہیں ذرا برابر بھی مجھ پر ترس نہ آیا ۔
میں کملی کیا جانا ں نینہہ کوں ظلمی نہر تے قہری شینہہ کو ں
آپے دید اڑا یو وے یار

مجھ پگلی کو عشق جیسے خونخوار بھیڑیئے اور غضب ناک شیر کا کہاں علم تھا ۔ تم نے خود ہی مجھ سے آنکھیں لڑائیں ۔
آپے اپناَ سُو نہاں کیتو کر ہوں قطاریو نال نہ نیتو
کیں دھوتی برمایو وے یار

یار مٹھی کوں ڈِ تڑو رولا ساڑیو کیتو کیری کولا
تتڑی کوں کیوں تایو وے یار

اے میرے محبوب ، تم نے مجھ بد نصیب کو برباد کر دیا، جلا کر خاکستر کر دیا اور اس سوختہ جاں کو شعلوں کے سپرد کر دیا۔
آپے شہر بھنبھور ڈو آیوں یاری لا کر چھوڑ سدھایوں
مفتا کوڑ کمایو وے یار

"بھنبھور "کے شہر میں تم خود ہی آئے تھے۔ دوستی بھی خود ہی کی تھی،پھر چھوڑ کے چلے گئے ، اس فریب عمل کی کیا ضرورت تھی۔
یار فرید کِڈاہیں سنبھلیسی سہجوں سڈ کر کول یلہیسی
جے وت بخت بھڑایو وے یار

فرید کبھی تو بخت میری یاروی کرے گا ، محبوب میری طرف متوجہ ہو گا اور مجھے اپنے پاس بلائے گا

جے وت بخت بھڑایو وے یار
فرید کبھی تو بخت میری یاروی کرے گا ، محبوب میری طرف متوجہ ہو گا اور مجھے اپنے پاس بلائے گا

 

کافی نمبر 34
۔17 مصرعے                       ۱۹۰ الفاط                            "راگ تلنگ "
"پردیس ڈہوں دیداں اڑیاں "
پردیس ڈِہوں دیداں اڑایاں وے یار          ساڈیاں وطن کنوں دلیں سڑیاں وے یار
چشم انتظار راستے پہ لگی ہے، اپنے وطن سے جی اچاٹ ہو گیا ہے۔
خبر نہیں انہاں کملیاں لوکاں تیغاں تیز برہوں دیاں نوکاں
درد منداں سرکھڑیاں وے یار

ان نادان لوگوں کو خبر نہیں کہ ہم اہلِ درد سر پر ہر وقت ہجر و فراق کی شمشیر برہنہ لٹک رہی ہے۔

جے تیں موت کریسم ٹالا ڈیکھاں نال اکھیں دے شالا
شہر اِرم شہ پریاں وے یار

جب تک مہلت موت دیتی رہے گی، یہی آرزو رہے گی کہ خدا کرے انہیں آنکھوں سے "شہرارم"دیکھوں اور اپنے محبوب شاہ پری کا دیدار کر لوں ۔
ڈیکھ کے چالیں یار سجَن دیاں ناز خراماں من مو ہن دیاں
کبکاں رو ہیں وڑیاں وے یار

میرے من موہن کا خراما ناز دیکھ کے "کبکان دری"شرمندگی سے پہاڑوں میں جا چھپی ہیں ۔
میں جیہاں تیڈیاں سوسٹھ سہیلیاں ناز نپنیاں راج گِہیلیاں
تھیاں دیوانیاں چرایاں وے یار

میرے جیسی سینکڑوں ناز پروردہ اور راج دلاریاں تمہاری دیوانی ہیں۔
کشنی چایم نیہڑا لایم جندڑی مفت فرید گنوایم
نبھ گِیاں سُکھ دیاں گھڑیاں وے یار

شومی قسمت سے میں تجھ سے دل لگا بیٹھی ، مفت میں جان گنوا بیٹھی سکھ آرام بھلا بیٹھی۔

 

کافی نمبر 35
۔30 مصرعے                        140 الفاظ                             "راگ تلنگ "
"بن دلبر آہیں کر کر "
بن دلبر آہیں کر کر کئی راتیں ڈِ تم سحر کر
فراق یار میں، آہ و زاری کرتے میری کئی راتیں صبح میں بدل گئی
روہ روہی راوے رلدی نت قدم قدم تے بھلدی
کڈیں تھک بِہندی کڈیں جلدی ہنَ سانول یار وہر ک
ر
کوہستانوں ، ریگستانوں اور چٹانوں میں بھٹکتی پھررہی ہوں ، کبھی راستہ بھول جاتی ہوں ،
کبھی تھک کر بیٹھ جاتی ہوں اور کبھی چل پڑتی ہوں، میرے محبوب میرے اس اضطراب کو دیکھ اور جلدی آ۔
ڈُکھی ڈُکھرے سنج صباحیں ڈُکھ ڈُونگر کو جھیاں جاہیں
جتھ ممیں غول بلائیں رچھ راخس بھجِدے ڈِر کر

صبح و شام دکھ اور اذیت، دشوار گزار پہاڑی راستے، بھیانک مقامات، جہاں آدم خور بلائیں اور غول بیابانی رہتے ہیں اور جہاں پر
ریچھ اور راکشس تک ڈرے ڈرے سے رہتے ہیں ۔
بن عاشق اہل وفا دے بن شائق ذوق لقا دے
بن صاحب صدق و صفا دے اتھ آوے کون گزر کر

اہل وفا، مشتاق دیدار اور عاشق صادق کے بغیر یہاں سے کون گزر سکتا ہے۔
لڈِ نیتو جھوک پر یرے دل درداں لایم دیرے
ڈِسے روٹی ہاں دے پیرے پیوں پاٹی خوں جگر کر

تم نے اپنا ٹھکانہ دور بنا لیا ۔ میرے دل میں غموں نے ٹھکانہ بنا لیا ۔ کچھ اچھا نہیں لگتا، روٹی پارہ ہائے دل اور پانی خون جگر کیطرح محسوس ہوتا ہے۔
تھئی کنڈڑے تول نہالی گھر ڈیوم ڈینَ ڈِکھالی
ول ہوت دلیں دا والی آ سینے ساڈے گھر کر

بستر کانٹوں کا، گھر بدروحوں کا محسوس ہوتا ہے، میرے جان و دل کا مالک، اب تو آ جا اور میرے سینے میں سماجا۔
گِیوں ویری کیچ سفر کر جی جالیو ظلم قہر کر
جکھ جکھدیں ویساں مر کر تھل مارو گور قبر کر

مجھ سے دشمنی کر کے تو کیچ چلاگیا۔ جی جلا گیا قہر بسا گیا گھل گھل کر ختم ہو جاؤں گی اور اِسی قاتل تھل میں اپنی قبر بناؤں گی۔
سوہنا یار فرید ڈوں آوے گُل لاوے سیجھ سہاوے
آ اجُڑی جھوک وساوے ہے! ٹھڈڑی آہ اثر کر

اے میرے محبوب، اب تو آجا مجھے گلے لگا، سیج کی رونق بڑھا ۔ اجڑا گھر بسا، اے میری آہ ! کچھ تو ہی اپنا اثر دکھا۔

 

 

 

روندیں عمر نبھائی ۔۔۔ یار دی خبر نہ کائی ۔۔۔ بھاگ سہاگ سنگار ونجایم ۔۔ د لوں وساریا ماہی

  دور گیا ول آیا ناہیں             ۔۔۔               مرساں کھا کر پھائی
    

 عشق نہیں کئی نار غضب دی ۔۔۔۔۔ چننگ چوانتی لائی      جو بن سارا روپ گنوایم     ۔۔۔۔۔۔۔      دردیں مار موسائی

 فخرالدین مٹھل دے شوقوں       ۔۔۔۔۔۔۔     دم دم پیٹ سوائی               یار فرید نہ پایم پھیرا      ۔۔۔۔۔۔       گل گیوم مفت اجائی