ڈیلی نیوز
جشن آزادی مبارک - یوم آزادی کے اس عظیم اور سعید موقعہ پر تمام پاکستانی بھائیوں کو مبارک باد پیش کرتے ہیں اور دُعا گو ہیں کہ اللہ تبارک تعالیٰ ہم سب کوآزادی کی اس نعمت کی قدر کی توفیق عطا فرمائے اور ایک دوسرے کی تکیف کا احساس عطا فرمائے۔۔ آمین۔ثم آمین۔۔۔ منجانب ۔ کمال فرید ملک خادم شہر فریدؒ

اردو حصہ دیوان محمدی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حضرت خواجہ محمد یار فریدیؒ ۔۔۔۔۔۔۔۔  بلبل باغ فریدؒ ۔۔            ۔            

اُم الکتاب ہے رُخ زیبا فرید کا

اُمُّ الکتاب ہے رُخِ زیبا فرید کا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا خوب فاتحہ ہے کتابِ مجیدکا
تختِ فرید تخت ہے ربِ فرید کا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نقشہ کچھا ہوا ہے یہ عرشِ مجید کا
سنتے ہیں دیکھتے ہیں سمیع و بصیر ہیں       ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مُنکِر کو ہے وعید عذابِ شدید کا 
ذکرِ فرید ذکرِ خدا، ہے خدا گواہ  ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہے فَاذْکُرُوا میں تذکرہ ذکرِ جدید کا
اَبْعَدْ بعید سب کہیں یٰااَیُّہَاالفرید  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یاں فرق اُٹھ چکا ہے قریب و بعید کا
میخانۂ فرید میں مستوں کی دھوم ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مستانہ ہو رہا ہے زمانہ فرید کا
بس یا فرید کہتے ہی جنت ملی ہمیں !۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اللہ، ڈھونڈتا ہے بہانہ فرید کا
میں بُلبلؔ فرید ہوں باغِ فرید میں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عادی ہوں عینِ دید میں ھَلْ مِنْ مَّزید کا

آیات بینات ہیں مکھڑا فرید کا
آیات بیّنات ہیں مکھڑا فرید کا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیدارِ کِرد گار ہے چہرا فرید کا
انور ہے آفتاب سے ذرّہ فرید کا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کھلتا نہیں کسی سے معما فرید کا
تفسیر والضحی ہے تجلّٰی فرید کا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تصویر مصطفے ہے نظارا فرید کا
جب تک سکون و گردش ارض و فلک رہے  ۔۔۔۔۔۔   ۔۔۔۔۔۔۔۔بجتا رہے الٰہی نقارا فرید کا
دریائے بے کنار ہے قطرہ فرید کا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ملتا نہیں کسی کو کنارا فرید کا
لاکھوں جلائے آپ نے ٹھوکر کے زور سے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اُٹھتا نہیں مسیح سے مارا فرید کا
غیروں کے در پہ جانے کی حاجت نہیں رہی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کافی ہے ہم کو ایک سہارا فرید کا
شاہ و گدا فقیر و غنی سب کو ہے پسند  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بُلبلؔ مگر ہے خاص پیارا فرید کا

آج دلبر کو ہم نے دیکھ لیا

آج دلبر کو ہم نے دیکھ لیا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حق کے مظہر کو ہم نے دیکھ لیا
اُن کی شوخ سی اس نگاہ میں ہر دم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تیر و خنجر کو ہم نے دیکھ لیا
پھر کسی پیر کی نہیں حاجت  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شیخ اکبر کو ہم نے دیکھ لیا
اُن کی قامت نہیں قیامت ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شورِ محشر کو ہم نے دیکھ لیا
تجھ کو اَے دلرُبا خدا رکھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صنع قادر کو ہم نے دیکھ لیا
آج نیکی مری تمام ہوئی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نیک منظر کو ہم نے دیکھ لیا
لب شیریں کی مسکراہٹ میں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لب کوثر کو ہم نے دیکھ لیا

فردؔ ہو کر فرید بن آیا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رازِ داور کو ہم نے دیکھ لیا

سہرا

برشادی کتخدائی حضرت قبلہ خواجہ فیض احمد صاحبؓ

حق نے دولہا پہ شفاعت کا اُتارا سہرا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ساری اُمت کے لیے بخش کا چارا سہرا
بخت بیدار ہوا تخت پہ آیا سردار  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عرشِ اعظم کے فرشتوں نے اُتارا سہرا
چشم بد دُور کہا حوروں نے اللہ غنی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سَرِ سرکار پہ کیا خوب سنوارا سہرا
پاک گلزار سے گُل چن کے پرویا ہم نے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاک دامن کے لیے پاک پیارا سہرا
دلربا دلبرو دلدار، دلآرا سہرا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نورِ جاں نورِجہاں نور نظارہ سہرا
فیض احمد پہ رہے فیض محمد ہر دم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔باغِ تفرید سے آیا ہے ہمارا سہرا
ہم نے مانا ہے عجب شان تھی پہلی لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی دِکھلا دے ہمیں ایسا دُلارا سہرا
آج اُترا ہے یہاں عرش کا تارا سہرا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کَل بجائے گا وہاں جا کے نقّارا سہرا
شانِ محبوب ملی، آن ملی محبوبی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فضل دوبارہ ہوا آیا دوبارہ سہرا
کیا عطا ہوتا ہے مالَن کو الٰہی دیکھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھول ہلکے ہیں مگر شان کا بارا سہرا
آلِ محبوب کو اولاد کا ہے وصل نصیب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جمع بحَرین رہے گا خضر خدارا سہرا
لاکھ الحمد کہ گلزار فریدالدین سے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج بُلبلؔ نے عجب نذر گزارا سہرا

کیا کہوں، حیرت میں ہوں رُتبہ رسول اللہ کا

کیا کہوں، حیرت میں ہوں رُتبہ رسول اللہ کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب بڑوں سے ہے بڑا چھوٹا رسول اللہ کا
بندگی سے آپ کی ہم کو خداوندی ملی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہے خداوند جہاں بندہ رسول اللہ کا
مر گئے مرتے ہیں لاکھوں حسرتِ دیدار میں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پر کہیں اٹھتا نہیں پردہ رسول اللہ کا
حیّ وقیم ہے ہمارا مصطفےٰ صلی علےٰ  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تا ابد رائج رہے سکہ رسول اللہ کا
خاک پائے مصطفےٰ کی حق نے فرمائی قسم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کون ہو سکتا ہے ہم پایہ رسول اللہ کا
قدرتِ قادر سے ہے ایجادِ جملہ ممکنات  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پر بنا سکتا نہیں ہمتا رسول اللہ کا
مملکت سلطانِ اعظم کی کہاں تک ہو بیاں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مالک و مملوک ہے سارا رسول اللہ کا
واجب و ممکن یہاں ملتے ہیں اے موسیٰ و خضر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجمع البحرین ہے چشما رسول اللہ کا
سُجَّدًا خَرُّوْالہ حورو مَلک جن و بشر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھ لیں بے پردہ گر مکھڑا رسول اللہ کا
آپ ہیں یکتا خدا یکتا کی یکتائی کو دیکھ  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شانِ یکتائی میں ہے جلوہ رسول اللہ کا
ہے نظیر احمد مرسل یقیناًممتنع  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس لیے ملتا نہیں سایہ رسول اللہ کا
نعت خواں بُلبلؔ تو اب بس کر بیاں مصطفےٰ  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تیرے لفظوں میں نہیں معنا رسول اللہ کا

قبلۂ قبلہا غریب نواز  

قبلۂ قبلہا غریب نواز   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کعبۂ اولیاء غریب نواز
ہے بدارُ الشفاءِ عثمانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرہم لادوا غریب نواز
منکروں کو لگے ہیں تیغ سے تیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دل سے جب نکلے یا غریب نواز
منکرو کب ندائے غائب ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھ لو جا بجا غریب نواز
دلبرِ باوفا غریب نواز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کانِ جودو حیا غریب نواز
دشمنوں کا بھلا ہوا تم سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دوستوں کا بھلا غریب نواز
تیرا میخانہ سن کے آیا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دَور سے مَے پلا غریب نواز
سن رہا ہوں کہ تیرے در پر ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے دل کی دوا غریب نواز
میری بگڑی کہیں نہیں بنتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو بنا، تو بنا غریب نواز
دل ہے ویراں، بنا غریب نواز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گھر ہے اُجڑا بسا غریب نواز
کر برائے خدا، برائے رسول ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری حاجت روا غریب نواز
میں غریب اور تو غریب نواز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لطف فرماؤ یا غریب نواز
مجھے دارالشفا ملا تیرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔در ہے دارالشفا غریب نواز
یک نظر از تو تا ابد کا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چشم رحمت کشا غریب نواز
یک نظر از تو کرد مستغنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔از کہ از ماسوا غریب نواز
دافع ہر بلا غریب نواز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رافع رُتبہ ہا غریب نواز
تو جو چاہے تو دل میں غل نہ رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرا دل کر صفا غریب نواز
مجھے دشمن کی ضرب میں ہر دم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہ رکھو مبتلا غریب نواز
مار دشمن کو یا سُدھار اس کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دو سے اک کر دکھا غریب نواز
کیا کہوں مختصر ہی کہنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دِل کا ہو مدعا غریب نواز
بُلبلاؔ گر ترانۂ خواہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بشنوا از ما کہ یا غریب نواز

خا کی پاک صورت کو محمد میر کہتے ہیں
خا کی پاک صورت کو محمد میر کہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد بے کدورت کو خدایا پیر کہتے ہیں
حسیں جتنے ہیں عالم میں غلامانِ محمد ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسی کو حسن والے حسن عالمگیر کہتے ہیں
فریدالدین کی تنویر کو سب دیکھنے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد مصطفےٰ کے حسن کی تصویر کہتے ہیں
نگاہ و زُلف نے مل کر مسخر کر لیا عالم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نگاہ شمشیر زُلف یار کو زنجیر کہتے ہیں
رُخِ ابیض جمال اللہ خط اسود جلال اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔رُخِ تاباں کو قرآن خط کو ہم تفسیر کہتے ہیں
فقط اک راز ہے دل میں کہ جس کو جاننے والے ۔۔۔۔جگر کے واسطے دل کے لیے اکسیر کہتے ہیں
محمد بن کے جینا جام توحید خدا پینا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔قلندر اس کو حضرتِ عشق کی تفسیر کہتے ہیں

دارالشفاء میں رَہ کے میں بیمار کیوں رہوں

دارالشفاء میں رَہ کے میں بیمار کیوں رہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چارہ ہے جب تو میرا تو ناچار کیوں رہوں
عبدالفرید ہو کے لباس فرید میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شاہنشہِ جہاں بنوں نادار کیوں رہوں
ہے آرزو یہ دل میں کوئی آرزو نہ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مطلوب جب کہ میں ہوں طلبگار کیوں رہوں
مدحِ محمدی سے محمد ملا ہے نام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مداح بے گناہ ہوں گنہگار کیوں رہوں

فریدالدین یار از نہانی دیکھتے جاؤ

فریدالدین یار از نہانی دیکھتے جاؤ  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد مصطفےٰ کی العیانی دیکھتے جاؤ
بہت دیکھے ہیں محبوبانِ عالم تم نے اَے یارو  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فریدالدین کی یوسف زمانی دیکھتے جاؤ
مریدی لاتخف سنتا ہے ہر اک چاہنے والا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہاں دریائے رحمت کی روانی دیکھتے جاؤ
اَلَایا ساکنانِ پاک پتن، کوٹ مٹھن میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فریدالدین لاثانی کا ثانی دیکھتے جاؤ
بیانِ زُلف میں آیا ہے واللیل اذا یغشیی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شب تاریک میں عنبر فشانی دیکھتے جاؤ
شہنشاہِ جہاں ہو کر جہاں کی پاسبانی کی  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شہنشاہی میں شانِ پاسبانی دیکھتے جاؤ
نشان میں بے نشاں کی بے نشانی دیکھتے جاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مکاں میں لامکاں کی لامکانی دیکھتے جاؤ
محمد میں فنا ہو کر محمد بن کے نکلا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حبیب کبریا کا شیخ فانی دیکھتے جاؤ

صورتِ رحمان ہے تصویر میرے پیر کی

صورتِ رحمان ہے تصویر میرے پیر کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔علم القرآن ہے تقریر میرے پیر کی
کیا کہوں کس سے کہوں کہنے کی حاجت ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کھلتی ہے تصویر سے توقیر میرے پیر کی
دیکھتے ہی مٹ گیا نقش خودی دِل سے میرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔راجم شیطان ہے تصویر میرے پیر کی
منکر دیدار کو اقرار ہوتا ہے نصیب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حجت و برہان ہے تصویر میرے پیر کی
کیا خدا کی شان ہے یا خود خدا ہے جلوہ گر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ملتی ہے اللہ سے تصویر میرے پیر کی
کیا عجب جذاب ہے زُلف مسلسل آپ کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وحشیوں کی جان ہے زنجیر میرے پیر کی
جن و انسان و ملک حورو فلک سجدہ میں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس خلافت ہو چکی تحریر میرے پیر کی
متفق ہیں کافر و مسلم فریدالدین میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا نرالی شان ہے تسخیر میرے پیر کی

سنگ دل جیسا ہو میرے سامنے ہوتا ہے موم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ میری صورت میں ہے تاثیر میرے پیر کی
خاک زر ہوتی ہے پتھر لعل بنتے ہیں یہاں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔باعث ایمان ہے اکسیر میرے پیر کی
جان والے مشتغل ہر آن ہوتے ہیں مگر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مشتغل ہر آن ہے تصویر میرے پیر کی
خلد ہے یا قُبّۂ بیضا ہے یا عرش خدا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جمالی شان ہے تعمیر میرے پیر کی
کوٹ مٹھن پاکپتن ہے فرید الدین کا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاکپتن میں بھی ہے تفسیر میرے پیر کی
غوثِ اعظم ہے فرید الدین اے چشم بصیر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فرش سے تاعرش ہے تنویر میرے پیر کی
دفتر یَمْحُوْ و یُثْبِتْ پر ہے تیرا اقتدار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گُل بنا بُلبلؔ کو اَے تقدیر میرے پیر کی

کھلے جلوے ہیں اِس در پر فقط اللہ اکبر کے

کھلے جلوے ہیں اِس در پر فقط اللہ اکبر کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمیں سجدے روا ہیں خواجۂ اجمیر کے در کے
یہ ہر دم کہہ رہے ہیں در پہ تختے سنگِ مر مر کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ پھرمرتے نہیں جو جی اُٹھے اس در پہ مَرمَر کے
یہ سنگ در ہے یا مظہر ہے حسن لایزالی کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ لاکھوں مہ جبیں ہیں جَبہ سا اس پاک پتھر کے
عجب میخانہ دیکھا اس شہِ اجمیر کے در پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ساقی بے تمنا دے رہا ہے جام بھر بھر کے
وہ قدقامت کہ قدقامت صلوٰۃ آمد تعالیٰ اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جھکے یاں آن کر سر قمری و سروو صنوبر کے
یہ کیا گرمیِ خورشید شہِ اجمیر ہے یارب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ چشمے کھل رہے ہیں چشم نابینائے شپّر کے
وہ بت ہے بت شکن اپنا کہ جس کے زورِ ایماں سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بتوں کے سر جھکے مسجد بنے بتخانے آذر کے
کجا لفظِ ثنائے ما، کجا شانِ خدائے ما ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ثنا خوانوں میں گنوایا ہے نام اپنا ثنا کر کے
خزاں کو اس گلستان میں امان ہرگز نہیں ملتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گُلِ احمر سے بُلبلؔ بے خطر لے جام احمر کے

کون ہے جو میرے درد کا درماں سوچے

کون ہے جو میرے درد کا درماں سوچے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کون ہے وہ جو میرے کفر کا ایماں سوچے
نہ ہی مسلم ہوں نہ کافر نہ گدا ہوں نہ خدا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے سوچے تو کوئی سر بگریباں سوچے
سب سے ملتا ہوں مگر سب سے جدا رہتاہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ حقیقت ہوں جسے عشق کا ناداں سوچے
شیخ کا وہم برہمن کا گماں کیا سمجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں مجھے فلسفئ خاک بداماں سوچے
نہ محمد ہوں نہ احمد نہ ہوں واحد نہ احد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے سوچے تو فقط حیرتِ حیراں سوچے

تمہارے آگے کسی کا چراغ جل نہ سکا

تمہارے آگے کسی کا چراغ جل نہ سکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جلا تو بجھ نہ سکا اور بجھا تو جل نہ سکا
میری فغاں پہ تو آنسو بہائے غیروں نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہارا دل کوئی پتھر سا پگھل نہ سکا
ہزاروں چارے نکالے تھے تیرے ملنے کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر تو مل نہ سکا کوئی چارہ چل نہ سکا
تیرے ستم کے فسانے سُنا سُنا کر کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہت سنبھالا تھا دل کو مگر سنبھل نہ سکا
ہزاروں پھسلے ہیں اس راہ میں مگر میں تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کریم کے کرمِ خاص سے پھسل نہ سکا
محمد عجمی کے نصیب کے صدقے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کسی کے جال میں ایسا پھنسا نکل نہ سکا

دین و دنیا سے بَری نکلے ہیں الفت والے

دین و دنیا سے بَری نکلے ہیں الفت والے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کفر کو چومتے ہیں ذوقِ محبت والے
شانِ ربی ہے جو کہلاتے تھے مسلم کل تک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج کافر ہیں نہ مسلم ہیں نہ ملت والے
تیری قامت نے قیامت کو ندامت بخشی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تیرے قربان ارے موہنی قامت والے
عشق میں سُود کا سودا نہ زیاں کا خطرہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دشمن جان پہ جاں دیتے ہیں چاہت والے
رنگ و بے رنگ میں گر فرق ہے اے اہل فراق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں محمد کو خدا کہتے ہیں وحدت والے
ہم تو لعنت سے بھی رحمت کے مزے لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم نہ ڈرتے ڈراتے ہیں لعنت والے
جو محمد میں فنا ہو کے محمد نہ بنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں اسے دار پر لٹکائیں شریعت والے

درد جس دل میں نہیں وہ دل نہیں

درد جس دل میں نہیں وہ دل نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار کے رہنے کی وہ منزل نہیں
جو نہ تڑپے زیر خنجر وقت قتل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کشتۂ تسلیم ہے بسمل نہیں
گل کے رہنے والے سب ہیں اہل دل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اہل دل جو ہیں وہ اہل گل نہیں
تیرا ملنا یا محمد مصطفےٰ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں نہیں آساں اگر مشکل نہیں

میری اب زندگی کو ختم ہو جانا نہیں آتا

میری اب زندگی کو ختم ہو جانا نہیں آتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرا ایسا ہوں کہ پھر مجھ کو مَر جانا نہیں آتا
میری پستی کو جو تحت الثریٰ کا شان رکھتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا کے عرش سے بھی پست کہلانا نہیںآتا
پَلا ہوں جن کے ٹکڑوں سے انہیں گانا سناؤں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے اب محفل اغیار میں گانا نہیں آتا
نہ سمجھا جتنا سمجھایا تھا ہم نے قلب ناداں کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمیں اب اپنے نادانوں کا سمجھنا نہیں آتا
نہ پیتا ہوں نہ کھاتا ہوں فقط دیکھا ہی کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے پینا نہیں آتا مجھے کھانا نہیں آتا
فریدالدین کی درگاہ کے سگ کی وہ ہیبت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ شیروں کو بھی اُس کے سامنے آنا نہیں آتا
محمد یار تھا آخر وہ اپنے گھر میں جا پہنچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کسی کو اپنے گھر سے لوٹ کر آنا نہیں آتا

ناز والے نیاز کیا جانیں

ناز والے نیاز کیا جانیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کفر والے نماز کیا جانیں
جو مقام تمیز سے گزرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بے تمیز امتیاز کیا جانیں
جو پلیدوں سے مل کے کھاتے ہیں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پاک احمد کا راز کیا جانیں
زاہد خشک حور کے بندے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمت عشق باز کیا جانیں
بدعتی قرنِ نجد کے شیطان  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمز وارِ حجاز کیا جانیں
اپنے بندوں پہ لطف فرمانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے بندہ نواز کیا جانیں
جو گرے ہیں نشیب اسفل میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ عروج و فراز کیا جانیں
حسن ظن نے گنہگار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بدگماں پاک پاز کیا جانیں
جو ہوس کے شکار بن بیٹھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ حقیقت مجاز کیا جانیں
اللہ اللہ محمد عربی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لوگ تیرا فراز کیا جانیں
دشمن دیں عدو محمد کے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرا سوز و گداز کیا جانیں
غزنوی شانباز کے شانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شانِ حضرت ایاز کیا جانیں
جو گرفتارِ زُلف یار نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طول زُلف دراز کیا جانیں
بندگانِ محمد عربی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رسمِ انداز و ناز کیا جانیں
اک گنہگار ہوں زمانے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ مزا پاکباز کیا جانیں

مر گئے ہیں کسی کی چاہ میں ہم

مر گئے ہیں کسی کی چاہ میں ہم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گِر پڑے ہیں کسی کے چاہ میں ہم
اب ہمارا پتہ نہیں ملتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مٹ چکے ہیں کسی کی راہ میں ہم
جرم میرے ہی عذر خواہ بنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب تو ہیں جرم کی پناہ میں ہم
بادشاہی ملی تباہی میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شاہ ہیں حالت تباہ میں ہم
اِک نگاہِ فرید کے صدقے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بے گناہ ہو گئے گناہ میں ہم
ہم کو جنت ملی ہے دنیا میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں رہیں آخرت کی چاہ میں ہم
بے گناہوں نے جب کہ طعن کیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوگنے ہو گئے گناہ میں ہم
ہم کو عصمت ملی ہے رحمت سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گرچہ مشّاق ہیں گناہ میں ہم
چھپ گئے گرچہ حکم نافذ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دامن رحمت اِلٰہ میں ہم
ہم محمد ہیں درس دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عشق احمد کی درس گاہ میں ہم

جو ہمارے یار تھے وہ چل بسے

جو ہمارے یار تھے وہ چل بسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو نکو کردار تھے سب چل بسے
اب تو دل میں ہے فقط خارِ فراق ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو گلوں کے ہار تھے سب چل بسے
اب تو نادانوں کی بستی ہے جہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو بڑے ہوشیار تھے سب چل بسے
دل کو اِک دم بھی نہیں ملتا سکون  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دل کے جو دلدار تھے سب چل بسے
شیر افضل ہم شریف وہم غلام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چارتھے غمخوار تھے سب چل بسے
سندھ میں عبدالمجید باوفا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وجد میں طیّار تھے سب چل بسے
کودکرفی النّار خاکستر ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عشق کے کفار تھے سب چل بسے
عشق کے سُلطان بدشت کربلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تشنۂ دیدار تھے سب چل بسے
گشتگانِ خنجرِ تسلیم را ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہر زماں دیدار تھے سب چل بسے
عشق کی بازی کو جت کر چت گِرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا بڑے ہونہار تھے سب چل بسے
جو محمد بن کے رکھتے تھے دھیان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خود محمدیارؔ تھے سب چل بسے

کیا کہوں عشق میں یارو کیا معلوم ہوتا ہے

کیا کہوں عشق میں یارو کیا معلوم ہوتا ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہر صورت بہر مورت خدا معلوم ہوتا ہے
خدا کہتے ہیں جس کو مصطفےٰ معلوم ہوتا ہے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جسے کہتے ہیں بندہ خود خدا معلوم ہوتا ہے
محمد سے جدا ہو کر خدا کی جسجتو والا  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا کو چھوڑ کر اہل ہوا معلوم ہوتا ہے
دلِ دانا نے گر سمجھا نہیں اسرارِ یزداں کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خطا والا مجھے کیوں بے خطا معلوم ہوتا ہے
خدا دانی نے کیا کیا لذتیں بخشیں خداداوں کو  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا کے جانے والا خدا معلوم ہوتا ہے
زمانہ چھان مارا نیک و بد کو غور سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہر اِک شئے میں حقیقت کا پتہ معلوم ہوتا ہے
شہِ توحید نے کیا شان بخشی ہے موحد کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ رہزن بھی بشکل رہنما معلوم ہوتا ہے
ہزاروں روپ بدلے سینکڑوں اشکال دکھلائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے سارا جہاں بہروپیا معلوم ہوتا ہے
فریدالدین دلبر کی نگاہوں کے تصدق سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زمانہ سارا مجھ کو دل ربا معلوم ہوتا ہے
کسی نفسِ مقدس یا کسی کے پارسا دل کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دل بدکار بھی اِک پارسا معلوم ہوتا ہے
شہِ خیر الوریٰ کے عشق میں اب تو محمدؔ بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد مصطفےٰ کا نقشِ پا معلوم ہوتا ہے

میری طرف بھی اِک نظر پاک دیکھئے

میری طرف بھی اِک نظر پاک دیکھئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مخدومِ پاک وارثِ لولاک دیکھئے
اک عمر سے میں لٹکا ہوں فِتراک میں تیرے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اَے بے نیاز جانب فتراک دیکھئے
آنکھیں بچھی ہوئی ہیں ترے فرشِ راہ پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اے شہسوارِ خنگ خطرناک دیکھئے
ظالم فلک مٹانے کو تیار ہے میرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔غصّے میں آکے جانب افلاک دیکھئے
جو مٹ چکا ہے اس کا مٹانا محال ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔قصد محال رکھتا ہے سفاک دیکھئے
اَملاک سربسجدہ ہیں آدم کے وقت سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کلیر کی سرزمین کے اَملاک دیکھئے
افلاک جھک رہے ہیں کسی کی زمین پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کلیر میں آکے منکرِ بیباک دیکھئے
مدت سے آرزو تھی کہ کچھ آرزو نہ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرا علوِ ہمت و ادراک دیکھئے
میں ایک خارِ زار ہوں گلزار میں تیرے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گُل تیرے دیکھے بھالے ہیں خاشاک دیکھئے
ہر سال لاکھوں آتے ہیں ہنستے ہوئے یہاں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اک رونے والا آیا ہے غمناک دیکھئے
رہتے ہیں پاک بندے ہزاروں حضور میں  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مخدومِ پاک بندۂ ناپاک دیکھئے
بد ہیں اگرچہ کام محمد ہے نیک نام  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انجام نیک لے گیا چالاک دیکھئے

محمد مصطفےٰ محشر میں طٰہٰ بن کے نکلیں گے

محمد مصطفےٰ محشر میں طٰہٰ بن کے نکلیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اٹھا کر میم کا پردہ ہُویدا بن کے نکلیں گے
حقیقت جن کی مشکل تھی تماشا بن کے نکلیں گے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جسے کہتے ہیں بندہ قل ہواللہ بن کے نکلیں گے
بجاتے تھے جو انّی عَبْدُہ کی بنسری ہر دم  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا کے عرش پر انّی انا اللّٰہ بن کے نکلیں گے
لباسِ آدمی پہنا جہاں نے آدمی سمجھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مُزمل بن کے آئے تھے تجلّی بن کے نکلیں گے
بشر کے رنگ میں بیرنگ ہی کا جلوہ پنہاں تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بشر کے رنگ والے صبغۃ اللہ بن کے نکلیں گے
رسولوں کے نبیوں کے قیامت میں حکومت سے ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ مالک بن کے نکلیں گے وہ مولا بن کے نکلیں گے
بپانعلِ عبودیت بسرتاجِ اُلُوہیت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا یکتا کی یکتائی کا نقشہ بن کے نکلیں گے
حسیں ایسے کہ جن کو دیکھ کر یوسف بھی محشر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بشکل پیر کنعانی زلیخا بن کے نکلیں گے
لواءِ الحمد لے کر احمد بے میم یا اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد یارؔ کے دل کی تمنا بن کے نکلیں گے

فرید پاک محشر میں مسیحا بن کے نکلیں گے
فرید پاک محشر میں مسیحا بن کے نکلیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مریضانِ محبت کا مداوا بن کے نکلیں گے
بجا کر عشق کا ڈنکا سرِ محشر باذنِ اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سرعشاق پر بیشک شہنشاہ بن کے نکلیں گے
حقیقت اِک معما ہے جو ہرگز کھل نہیں سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حقیقی حسن سے شرحِ معما بن کے نکلیں گے
عبودیت کی شاخیں جتنی تھیں سب ختم کر ڈالیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔الوہیت کے جلووں کا تماشا بن کے نکلیں گے
پہن کر یاء کا پردہ خود فرید وقت بن بیٹھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اٹھا کر پردۂ یا، فردِ یکتا بن کے نکلیں گے
محمد کے تصور میں محمد بن کے بیٹھے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔غلامانِ محمد کے وہ مولا بن کے نکلیں گے

دیکھے ہیں ہم نے حسن کے سامان نئے نئے

دیکھے ہیں ہم نے حسن کے سامان نئے نئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بُستان نئے نئے ہیں گلستاں نئے نئے
زلفوں کے جال میں جو پھنسا پھر نہ چھٹ سکا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھنستے ہیں اس میں یوسف دوراں نئے نئے
سوزو گداز و دردو غمِ عشق و ابتلا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آتے ہیں دل کی بستی میں مہماں نئے نئے
میرے حبیب پاک کے شوریدگانِ دل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کافر نئے نئے ہیں مسلماں نئے نئے
جلووں سے حسن یار کے آتی ہے یہ صدا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھو ہمارے حسن کے طوفاں نئے نئے
مقتل میں جا کے خنجر خونخوار کے تلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر رکھ رہے ہیں عاشق جاناں نئے نئے
احمد احد میں فرق نہیں اے محمداؔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عشاق یار رکھتے ہیں ایمان نئے نئے

انداز حسینوں کو سکھائے نہیں جاتے

انداز حسینوں کو سکھائے نہیں جاتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو اُمی لقب ہوں وہ پڑھائے نہیں جاتے
ہر ایک کا حصہ نہیں دیدار کسی کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بوجہل کو محبوب دکھائے نہیں جاتے
میں کیا کہوں کس رنگ کا اب درد ہے دل میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بے درد کو یہ درد سنائے نہیں جاتے
عشّاق کا حصہ ہے امانت کا اُٹھانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔افلاک سے یہ بوجھ اٹھائے نہیں جاتے

کیا کہوں اپنی حقیقت کوئی ہمراز نہیں

کیا کہوں اپنی حقیقت کوئی ہمراز نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی ہمدم نہیں اپنا کوئی دمساز نہیں
ساتھ لے لو مجھے اے قافلے والو، لے لو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں رہا جاتا ہوں مجھ میں وہ تگ و تاز نہیں
مٹ گئے خاک ہوئے کوچے میں اس ظالم کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر وہ کہتے ہیں کہ تو قابل ہم راز نہیں
ہمت عشق کا اَک گام فقط کافی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا کروں اب میری ہمت میں وہ پرواز نہیں
خنجرِ ناز نے جب قتل کیا عاشق کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مسکراتے ہوئے فرمایا کہ یہ ناز نہیں
ایک ٹھو کرسے ہزاروں کو جلایا لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری نوبت میں کہا ہم میں یہ اعجاز نہیں
گر محمدؔ نے محمد کو خدا مان لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر تو سمجھو کہ مسلمان ہے دغا باز نہیں

الحمد آج پہنچا ہوں اس سیمبر کے پاس

الحمد آج پہنچا ہوں اس سیمبر کے پاس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا مقام رہتا ہے قلب و جگر کے پاس
میرے جگر کے چاک کو سینا حرام ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں درد مند جائے کسی بخیہ گر کے پاس
سوزِ فراق نے میرا سینہ جلا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عینِ وصال میں ہوں میں نارِ سقر کے پاس
سونا ہی بن گئے نہ سونے سے اہل دل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اِس واسطے میں سوتا ہوں اِک نوحہ گر کے پاس
مَرہم گئے تو مرہمِ دردِ جگر ملی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مر مر کے آج پہنچی ہے زخمِ جگر کے پاس
دردِ فرید میرا بُراقِ عروج ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لے جائے گا اڑا کے محمد نگر کے پاس
گرچہ گنہگار ہوں ابن الفرید ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرا گِلہ کرو میرے اپنے پدر کے پاس

رنگ دیکھا عجب زمانے میں

رنگ دیکھا عجب زمانے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خُم ہیں خالی شراب خانے میں
آج آئے تو کل ہوئے واپس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ملا ہم کو آنے جانے میں
کارخانے میں خاک چھانی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہم تھا صرف کارخانے میں
میری مٹی خراب کر ڈالی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کھپ بڑی تھی خراب خانے میں
نامرادی میری مراد بنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ملے گا مراد پانے میں
یافرید الزماں کرم کرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا کمی ہے تیرے خزانے میں
تیر کَس کَس کے ایسا مارا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ مَچی دھوم ہے زمانے میں
مَر گئے انتظار میں ہم تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۱؂دیر ہوئی ہے کسی کے آنے میں
تاکہ شُدیارِ من محمدیار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سلطنت مل گئی زمانے میں
حیرت میں ہوں، کیا لکھوں شانِ محمد کا
حیرت میں ہوں، کیا لکھوں شانِ محمد کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیدارِ محمد ہے قرآن محمد کا
بخشے گئے جتنے تھے بدکار ہی عالم میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طوفان میں جب آیا غفران محمد کا
بندوں نے خدائی کی جب ان کے بنے بندے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بندوں پہ عجب برسا باران محمد کا
شاگردِ محمد ہیں اُستاد دو عالم کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اُستاد بنا سب کا نادان محمد کا
ڈوبا تو نکالا ہے پھِسلا تو سنبھالا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں بھول نہیں سکتا احسان محمد کا
دشمن کو کچل ڈالو فرمانِ محمد ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ نے سنا ڈالا اعلان محمد کا
تصویر محمد ہے تحریر محمد کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تقریر محمد ہے تبیان محمد کا
کفرانِ محمد ہے کفرانِ خداوندی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کفرانِ خداوندی کفران محمد کا
شاہنشہئ عالَم جب اُن کو مُسلّم ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر کیوں نہ ہو جبریل سا دربان محمد کا
وہ جلوۂ نورانی وہ نقشۂ رحمانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رہتا ہے میرے دل میں ہر آن محمد کا
ہر ان میں ہر شان کے مظہر ہی محمد ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہر آن میں ہر شان میں ہے ذیشان محمد کا
ہم نام محمد ہوں مداحِ محمد بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاتھوں سے نہ چھوٹے گا دامانِ محمد کا
 
زُلف کا بال بال بگڑا ہے
زُلف کا بال بال بگڑا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔قید کرنے کو جال بگڑا ہے
اُن کے ابرو کا بال بگڑا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یعنی رنگِ جدال بگڑا ہے
رُخ انور کا خال بگڑا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مصطفےٰ کا بلال بگڑا ہے
ختم ہو جائے زندگی میری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب تو میرا مآل بگڑا ہے
بُت ظالم اگر بگڑ جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سمجھ لو ذُوالجلال بگڑا ہے
دیکھ کر حال مست رندوں کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شیخ کا قیل و قال بگڑا ہے
میری مَٹی خراب مت کرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کسی کا جمال بگڑا ہے
اب تو دل میں وہ ذوق شوق نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شاید اُن کا خیال بگڑا ہے
قامت یار کی قیامت سے  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج محشر کا حال بگڑا ہے
غور کرنا محمد عربی! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس محمد کا حال بگڑا ہے
چِین ابرو کو دیکھ کر یک دم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چینیوں کا کمال بگڑا ہے
اِس بگڑنے کی بس مثال نہ پوچھو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دلبرِ بے مثال بگڑا ہے
 
حق نے چاہا تو مل کے بیٹھیں گے
حق نے چاہا تو مل کے بیٹھیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بے خطر ہو سنبھل کے بیٹھیں گے
یار اپنا ہے آسمان اپنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دشمنوں کو کچل کر بیٹھیں گے
بوسہ لیں گے کنار میں لے کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مست ہو کر مچل کے بیٹھیں گے
دور سے بے قصُور دیکھیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اُن کے پہلو سے ٹل کے بیٹھیں گے
یار کی دید عید ہے اپنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بحرِ غم سے نکل کر بیٹھیں گے
گر ہمارا ہوا محمد یار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بادشاہوں میں چل کے بیٹھیں گے
 
آج الحمد کوئی آیا ہے مہماں اپنا
آج الحمد کوئی آیا ہے مہماں اپنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خونِ دل لختِ جگر خوب ہے ساماں اپنا
دل میں زخموں کی چمک سے ہے اُجالا ہر دم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی اپنا ہو تو آدیکھے چراغاں اپنا
جن کے آنے کی تمنا تھی وہ لے آئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے زخموں پہ چھڑکنے کو نمکداں اپنا
ہم تو قرآن کے حافظ ہیں پڑھا کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رُخِ محبوب انوکھا ہے یہ قرآں اپنا
چشمِ بددُور خدا رکھے تجھے اے ظالم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تیرے ظلموں نے کچل ڈالا ہے ایماں اپنا
یارسولِ عربی لطف سے دیکھاکرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہیں جا کر نہ پھِسل جائے ثنا خواں اپنا
میری تقدیر بدلنے کو لیے بیٹھے ہیں! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاتھ میں مالکِ تقدیر قلمداں اپنا
نفس و شیطاں سے کہو میری تمنّا نہ کرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مالک الفقر فریداست سُلیماں اپنا
ہم حسینوں کے گلستاں میں رہا کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا الٰہی یہ سلامت رہے بُستان اپنا
میں محمدؔ ہوں فقط فخرہے ہمنامی کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جن کا ہمنام ہوں کافی ہے نگہبان اپنا
 
ہر روز حسینوں کا دیدار اگر ہوتا
ہر روز حسینوں کا دیدار اگر ہوتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں دیدۂ تر ملتا کیوں دردِ جگر ہوتا
میں حسن کا بندہ ہوں دیدار سے زندہ ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہے بَر میں میرے دلبر کیوں خاک بسر ہوتا
اک راز ہے سر بستہ محرم کو سناؤں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں قلب و جگر جلتے اظہار اگر ہوتا
جنت ہے میری طالب میں طالب جنت ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مطلوب مجھے ملتا گر پاک نظر ہوتا
جب نام محمدؔ ہے ناکام رہوں کیوں میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناکام ہی رہتا میں گر طالب زر ہوتا
 
حسینوں میں ہے انجلائے محمد
حسینوں میں ہے انجلائے محمد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جبینوں میں چمکا ضیائے محمد
قمر چیر ڈالا کیا موم پتھر! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زہے قوتِ دست و پائے محمد
زتحت الثریٰ تاسرِ عرشِ اعظم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چلو دیکھ لو جلوہ ہائے محمد
بشر کو محمد سے نسبت نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پڑھو غور سے اِنّمائے محمد
میرے منہ کو چومتا ہے زمانہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ میں بن گیا نقشِ پائے محمد
ازل سے ہے دل میں ہوائے محمد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابد تک رہے اے خدائے محمد
محمد کو بھولوں یہ ممکن نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ہے یاد مجھ کو وفائے محمد
ہے مسجود میرا خدا جانتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدائے محمد بجائے محمد
محمدؔ نے جس دم محمد کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو ثابت ہوا مدعائے محمد
خطا میری سب سے بڑی تھی مگر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد نے بخشی خطائے محمدؔ
 
تمہارے منہ سے جو نکلی وہ بات ہو کے رہی
تمہارے منہ سے جو نکلی وہ بات ہو کے رہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہا نہیں کو جو کُن کائنات ہو کے رہی
تمہارے ہونے سے ہونا ہے ہر دو عالَم کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہماری زندگی تجھ بن ممات ہو کے رہی
تیرے کرم نے ہمارے وہ کام کر ڈالے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ جن کے کرنے میں تقدیر مات ہو کے رہی
خدائے پاک نے قُلْ یَاعِبَاد کہہ کے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہارے بندوں کی آقا نجات ہو کے رہی
رسولِ پاک کے بندوں کو مُردہ مت کہنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ اُن کی مَوت تو عینِ حیات ہو کے رہی
تیرے غلام کا غصّہ پڑاجو سورج پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تودن کی روشنی اِکدَم میں رات ہو کے رہی
نظر میں آتا ہے عالَم کو جو زمانے میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہاری ذات ہے لیکن صفات ہو کے رہی
درِحضور پہ سجدے میں میرا دم نکلا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادا نماز ہوئی اور زکوٰت ہو کے رہی
اگرچہ کام ہے بد نیک نام کے صدق۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد عجمی کی برات ہو کے رہی
 
خدا ملے تو ملے پر صنم نہیں ملتا
خدا ملے تو ملے پر صنم نہیں ملتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمارے یار کا نقشِ قدم نہیں ملتا
وہ اڑ گیا جو غبارِ حدوث تھا مجھ پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں کیوں کہوں کہ مجھے اب قدم نہیں ملتا
نماز اپنی ہے حج و زکوٰۃ اپنے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جہادِ نفس میں رنج و الم نہیں ملتا
فرید پاک نے اک جام بھر کے پلوایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمارے جام سے اب جامِ جم نہیں ملتا
وہ سوز جس سے دلِ زار بیقرار رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بجُز عنایت و لطف و کرم نہیں ملتا
محمد عربی کا شراب مستوں کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بجز عبادتِ روئے صنم نہیں ملتا
 
خرامِ ناز میں آیا تو دیکھا اور پہچانا
خرامِ ناز میں آیا تو دیکھا اور پہچانا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محمد مصطفےٰ یعنی خدا مٹھن کی گلیوں میں
خدا کو ہم نے دیکھا ہے سدا مٹھن کی گلیوں میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔خدا بے پردہ ہے جلوہ نما مٹھن کی گلیوں میں
فرید پاک کی صورت میں بے صورت کا جلوہ ہے۔۔۔۔۔۔۔تو بے رنگی میں آ صورت مٹامٹھن کی گلیوں میں
احد احمد ہے لیکن میم کے پردے میں آیاہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہن کر یا کا پردہ فرد تھا مٹھن کی گلیوں میں
وہی جلوہ جو فاراں پر ہوا احمد کی صورت میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسی جلوے کو پھر عُریاں کیا مٹھن کی گلیوں میں
بھلا کیوں کوٹ مٹھن کو میں ہر دم یاد رکھتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ میرا میٹھا میٹھا یار تھا مٹھن کی گلیوں میں
مجھے گریاد کرنا ہو تو یونہی یاد کر لینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمارا اک محمدیارؔ تھا مٹھن کی گلیوں میں
 
شانِ جلال سے کہو تجھ کو جلال کی قسم
شانِ جلال سے کہو تجھ کو جلال کی قسم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری قبر نہ ڈھونڈنا میری کہیں قبر نہیں
پاؤں کے نیچے روند کر میرا نشان مٹا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر ہے نشان کی جستجو عشق میں کچھ اثر نہیں
اب تو کمانِ عشق سے تیر ہنر نکل چلا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرا جگر خریدلو پہلو میں گر جگر نہیں
دل کی یہ چیخ تھی مگر جس نے جہاں جگا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماتمِ عشق میں ہمیں حاجت نوحہ گر نہیں
عاشق لا شریک کے رشتے تمام جل گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب وہ پدر پدر نہیں اب وہ پسر پسر نہیں
کس کا اثر تھا قیس کا جس نے جگر جلادیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جا کے جگر سے پوچھنا عشق کا گر اثر نہیں
تیرا ہی ملنا ہو گیا اب تو محال اے صنم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاتھ میں میرے زر نہیں دل میں میرے اثر نہیں
ہنس کے کہا محمداؔ میں ہوں محمد عرب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرا جہاں گزر ہوا تیرا وہاں گزر نہیں
 
وہ خاکسار ہوں برہم میرا مزار رہا
وہ خاکسار ہوں برہم میرا مزار رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ خاک ہو کے بھی ہر ذرہ اشکبار رہا
سیاہ زلف کے ہر تار تار کے صدقے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سیاہ کاروں پہ ہر تار مشکبار رہا
ہمارے دل میں ہمیشہ ہوائے یار رہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر نہ ہم پہ کبھی ان کو اعتبار رہا
مٹے کچھ ایسے کہ مٹ مٹ کے بے نشان ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر یہ مٹنا ہمارا نشانِ یار رہا
تمام عمر کٹی انتظار میں اب تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہ ہم رہے نہ ہمارا وہ انتظار رہا
غبار ہو کے اڑے کوئے یار میں لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمارے یار کے دل پر وہی غبار رہا
خدائے پاک کی رحمت ہو اُن نگاہوں پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ جن کے لڑنے سے دل میرا بیقرار رہا
نجات مل نہ سکی جب ہجومِ عصیاں سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری نجات کا رحمت پہ انحصار رہا
فرید پاک کی پاکی کی اِک دلیل ہوں میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ بے گناہ ہی رہا گرچہ گنہگار رہا
ہمارے عجز نے ایسے نیاز کر ڈالے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ہر نیاز میں ناکام کامگار رہا
محمد عربی کے غلام کے صدقے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ہر زمانے میں عالم کا تاجدار رہا
کِنارِ یار سے نکلا نہیں محمدیارؔ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جہاں رہا وہ محمد سے ہمکناررہا
 
مجھ کو قسم ہے خالقِ عرشِ عظیم کی
مجھ کو قسم ہے خالقِ عرشِ عظیم کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یادِ خدا ہے یاد رسولِ کریم کی
بھولا ہوا ہے جس نے بھلایا حضور کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھولی ہے اس کو یاد رہِ مستقیم کی
بیشک گنہگار ہوں ڈرتا نہیں ہوں میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عادت ہے مجھ کو یاد غفورُالرحیم کی
قسمت پہ مجھ کونازہے قسمت کو مجھ پہ ناز۔۔۔۔۔۔خوش بخت و شادماں ہوں قسم ہے قسیم کی
یٰسین میں مزمل و طٰہٰ و طور میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تفسیر ہے فقط رُخِ درّ یتیم کی
جلوہ نما ہے نور نبی شش جہات میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کونین میں نمود ہے ماہِ وسیم کی
طالب خدا ہے اُن کا وہ طالب خدا کے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تفریق ہے فقط یہ حبیب وکلیم کی
صلِ علیٰ یہ عظمت و اعزازِ مصطفےٰ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یادِ خدا ہے یاد رسولِ کریم کی
ہر صبح و شام ہوتی ہے بارانِ بیکراں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم مجرموں پہ آپ کے لطفِ عمیم کی
زاہد تری تمام عبادت فضول ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دل میں اگر تڑپ نہیں حُبِّ کلیم کی
لاریب دو جہاں میں وہی سرفراز ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔اُلفت ہے جن کے دل میں نبئ کریم کی
دونوں جہاں کی ظلمتیں کافور ہو گئیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اُٹھی رُخِ جمال سے چلمن جو میم کی
یہ حسنِ مہرو ماہ یہ شادابئ چمن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہے اک کرن جمالِ حبیبِ علیم کی
روزِ جزا کی فکر ہو کیوں کر محمدا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بخشش ہے اُن کے ہاتھ میں اپنے اثیم کی